Book Name:Wasail e Bakhshish

ہو عطاؔر کی بے سبب بخشش آقا

یہ فرمائیں   حق سے دعا غوثِ اعظم

 

شَہَنْشاہِ بغداد یاغوثِ اعظم

شَہَنْشاہِ بغداد یاغوثِ اعظم                               سنو میری فریاد یاغوثِ اعظم

بُلا لیجے بغداد یاغوثِ اعظم                                سنانی ہے رُوداد یاغوثِ اعظم

لگا کر مجھے اپنے قدموں   سے مرشِد                       مرا دل کرو شاد یاغوثِ اعظم

ترے پاک جلووں   سے یاپیر و مرشد                      مرا دل ہو آباد یاغوثِ اعظم

پِلا جام ایسا سِوا تیرے آقا                                 نہ کچھ بھی رہے یاد یاغوثِ اعظم

مرے قلب سے حُبِّ دنیا کی مرشِد                       اُکھڑ جائے بُنیاد یاغوثِ اعظم

رہے مجھ پہ میٹھی نظر مرشِدی گر                         پڑے کچھ نہ اُفتاد([1])یاغوثِ اعظم

ترے ہوتے یاپیر! رنج و الم کی                            کروں   کِس سے فریاد یاغوثِ اعظم

ترے در کے منگتے سب اَغواث و اَقطاب                  اور اَبدال و اَوتاد یاغوثِ اعظم

مکرّم شہا تیرے سارے کے سارے                      ہیں   آباء و اَجداد یاغوثِ اعظم

شہا کاش! در کا بنا لیتی کُتّا                                    مجھے تیری اولاد یاغوثِ اعظم

رہیں   شاد و آباد عالم میں   میرے                           سبھی گھر کے افراد یاغوثِ اعظم

مجھے پیارے گیارہ بھی بارہ بھی پچّیس                     کے لگتے ہیں   اعداد یاغوثِ اعظم

عَدو قتل کرنے کے دَر پَے ہُوا ہے                        مدد شاہِ بغداد یاغوثِ اعظم

 

عَدو تومخالف تھے پہلے ہی سے اب      بڑھا زورِ حُسّاد([2]) یاغوثِ اعظم

گناہوں   نے مجھ کو کہیں   کا نہ چھوڑا      نہ ہو جاؤں   برباد یاغوثِ اعظم

مجھے نفسِ ظالمِ پہ کر دیجے غالِب         ہو ناکام ہَمزاد([3]) یاغوثِ اعظم

دمِ نَزع دیدار کی بھیک دینا              چلے جاں   مری شاد یاغوثِ اعظم

گَرفتارِ رنج و بلا یہ گدا ہے                کرو آکر آزاد یاغوثِ اعظم

 



[1]     مصیبت

[2]     حاسد کی جمع  

[3]     انسان کے بچّے کے ہمراہ پیدا ہونے والا شیطان جوکہ بہکانے کیلئے ہر وقت ساتھ رہتا ہے۔



Total Pages: 406

Go To