Book Name:Wasail e Bakhshish

رہے شاد و آباد میرا گھرانا

کرم ازپئے مصطَفٰے غوثِ اعظم

دمِ نَزع شیطاں   نہ ایمان لے لے

حفاظت کی فرما دعا غوثِ اعظم

مُریدین کی موت توبہ پہ ہوگی

ہے یہ آپ ہی کا کہا غوثِ اعظم

مری موت بھی آئے توبہ پہ مُرشِد!

ہوں   میں   بھی مرید آپ کا غوثِ اعظم

کرم آپ کا گر ہوا تو یقینا

نہ ہوگا بُرا خاتِمہ غوثِ اعظم

مری قبر میں   ’’لاتَخَف‘‘کہتے آؤ

اندھیرا رہا ہے ڈرا غوثِ اعظم

گو عطارؔ بد ہے بدوں   کا بھی سردار

یہ تیرا ہے تیرا، تِرا غوثِ اعظم

 

نظارہ ہو دربار کا غوثِ اعظم

نظارہ ہو دربار کا غوثِ اعظم                   دِکھا نیلا گنبد دِکھا غوثِ اعظم

مجھے جامِ الفت پِلاغوثِ اعظم                رہوں   مست و بے خود سدا غوثِ اعظم

کرم کیجئے پھر میں   بغداد آؤں                  مِرے پِیر کا واسِطہ غوثِ اعظم

مجھے اپنی چَوکھٹ کا کُتّا بنا لو                     ہمیشہ رہوں   باوفا غوثِ اعظم

ترے آستاں   کا ہوں   منگتا گزارہ              ہے ٹکڑوں   پہ تیرے مِرا غوثِ اعظم

گناہوں   کا بار اپنے سر پر اُٹھا کر                 پھروں   کب تلک جا بجا غوثِ اعظم

علاج آخِر اے مرشِدی کب کریں   گے!    گناہوں   کے بیمار کا غوثِ اعظم

گنہگار ہوں   گر عذابوں   نے گھیرا             تو ہو گا مِرا ہائے! کیا غوثِ اعظم

نظر مُرشِدی تیری جانب لگی ہے           عذابوں   سے لینا بچا غوثِ اعظم

جہاں   میں   جیوں   سنّتوں   کے مطابِق          مدینے میں   ہو خاتِمہ غوثِ اعظم

 



Total Pages: 406

Go To