Book Name:Wasail e Bakhshish

جو اپناتے ہیں   ’’مدنی انعام‘‘ اکثر       انہیں   حشر میں   بخشوا غوثِ اعظم

دمِ نَزْع پانی اُترتا نہیں   ہے              پِلا شربتِ دید یاغوثِ اعظم

ہے عطارؔ کو سَلبِ ایماں   کا دھڑکا

بچا اس کا ایماں   بچا غوثِ اعظم

 ہر کلمے کے بدلے ایک سال کی عبادت کا ثواب

 

    ایک بار حضرتِ سیِّدُنا مُوسیٰ کلیمُ اللہ علٰی نَبِیِّنا وَعَلیہِ الصّلوٰۃ وَالسّلام نے بارگاہِ خُداوندی عَزَّوَجَلّ َ میں عرض کی:

یا اللہ عَزَّوَجَلَّ جو اپنے بھائی کو نیکی کا حکم کرے اور بُرائی سے روکے اس کی جَزا کیا ہے؟ اللہ تبارَکَ وَتَعالیٰ نے ارشاد فرمایا: میں اُس کے ہر ہرکلمہ کے بدلے ایک ایک سال کی عبادت کا ثواب لکھتا ہوں اور اُسے جہنَّم کی سزا دینے میں مجھے حَیا آتی ہے۔ (مُکَاشَفَۃُ الْقُلُوْب ص۴۸)

 

مرے خواب میں   آ بھی جا غوثِ اعظم

مرے خواب میں   آ بھی جا غوثِ اعظم

پلا جامِ دیدار یاغوثِ اعظم

کبھی تو غریبوں   کے گھر کوئی پَھیرا!

ہماری بھی قسمت جگا غوثِ اعظم

کچھ    ایسی    پلا    دو    شرابِ    مَحَبَّت

نہ اُترے کبھی بھی نَشہ غوثِ اعظم

ہیں   زیرِ قدم گردنیں   اَولیا کی

تمہارا ہے وہ مرتبہ غوثِ اعظم

ہیں   سارے ولی تیرے زیرِنگیں ([1])اور

ہے تُو سیِّدُ الاَْولیا غوثِ اعظم

مدد کیجئے آہ! چاروں   طرف سے

میں   آفات میں   ہوں   گِھرا غوثِ اعظم

 

  بہار آئے میرے بھی اُجڑے چمن میں 

چلا کوئی ایسی ہوا غوثِ اعظم

 



[1]     ماتَحت

 



Total Pages: 406

Go To