Book Name:Wasail e Bakhshish

جس طرح مُردے جِلا ئے اِس طرح مُرشِد مرے

مُردہ دل کو بھی جِلا، یاغوثِ اعظم دَسْتْگِیر

 

اہلِ محشر دیکھتے ہی حشر میں   یوں   بول اُٹھے

مرحبا صد مرحبا یاغوثِ اعظم دَسْتْگِیر

آپ جیسا پیر ہو تے کیا غَرَض دَردَر پھروں   

آپ سے سب کچھ ملا یاغوثِ اعظم دَسْتْگِیر

گو ذلیل و خوار ہوں   بدکار و بدکردار ہوں   

آپ کا ہوں   آپ کا‘ یاغوثِ اعظم دَسْتگِیر

راستہ پُر خار، منزِل دُور، بَن سُنسان ہے

المدد اے رہنما! یاغوثِ اعظم دَسْتْگِیر

غوثِ اعظم! آیئے میری مدد کے واسِطے

دشمنوں   میں   ہوں  گِھرا یاغوثِ اعظم دَسْتگِیر

آفتیں   بھی دُور ہوں   ، رنج وبلا کافور ہوں 

از طفیلِ مصطَفٰے یاغوثِ اعظم دَسْتْگِیر

اِذن دو بغداد کا ہر اک عقیدت مند کو

گیارہویں   والے پیا یاغوثِ اعظم دَسْتْگِیر

میٹھے مُرشِد حاضِری کو اِک زمانہ ہو گیا

در پہ پھر مجھ کوبُلا، یاغوثِ اعظم دَسْتْگِیر

 

میرے میٹھے میٹھے مُرشِد آیئے نا خواب میں   

واسطہ سرکار کا، یاغوثِ اعظم دَسْتْگِیر

اپنی اُلفت کی پِلا کر مَے مجھے یامُرشِدی

مَست اور بیخود بنا یاغوثِ اعظم دَسْتْگِیر

لمحہ لمحہ بڑھ رہا ہے ہا ئے ! عصیاں   کا مَرَض

دیجئے مجھ کو شفا‘ یاغوثِ اعظم دَسْتْگِیر

مُرشِدی مجھ کو بنا دے تُو مریضِ مصطَفٰے

 



Total Pages: 406

Go To