Book Name:Wasail e Bakhshish

جس نے لگایا زور سے یا غوث کا ہے نعرہ

 وہ دشمنوں   پہ چھا گیا بغداد والے  مرشد

بیداربخت وہ ہے حقیقت میں   جس کو جلوہ

تُو خواب میں   دِکھا گیا بغداد والے مرشد

ایمان اُس کا بچ گیا شیطان سے ، جو تیرے

ہے’’ سلسلے‘‘ میں   آ گیا بغداد والے  مرشد

کیوں   نَزْع وقَبْر وحشرکا ڈر اَب مُریدوں   کو ہو 

تو ’’لا تَخَف‘‘ سنا گیا بغداد والے  مرشد

دیدار بھی کرادے مجھے کلمہ بھی پڑھا دے

اب وقتِ رِحْلَت آ گیا بغداد والے مرشد

عطّارؔ آکے کاش! یہ دربار میں   کہے پھر

بغداد میں   پھر آ گیا بغداد والے  مرشد

 

رونقِ کُل اولیا یاغوثِ اعظم دَسْتْ گِیر

رونقِ کل اولیا یاغوثِ اعظم دَسْتْگِیر

پیشوائے اَصفیا یاغوثِ اعظم دَسْتْگِیر([1])

آپ ہیں   پیروں   کے پیراورآپ ہیں   روشن ضمیر

آپ شاہِ اَتقیا یاغوثِ اعظم دَسْتْگِیر

اولیاء کی گردنیں   ہیں   آپ کے زیرِ قدم

یاامامَ الاولیا یاغوثِ اعظم دَسْتْگِیر

تھر تھر اتے ہیں   شہا جِنّات تیرے نام سے

ہے ترا وہ دبدبہ یاغوثِ اعظم دَسْتْگِیر

پیدا ہو تے ہی رکھے رَمضاں   میں  روزے، دن میں   دودھ

کا نہ اک قطرہ پیا یاغوثِ اعظم دَسْتْگِیر

 



[1]       دَسْتْ یعنی ہاتھ، گِیر یعنی تھامنے والا ،مددگار۔دَستْ۔گیر پڑھئے اکثر دَسْ۔تَگیرپڑھتے ہیں   جو کہ درست نہیں   ۔



Total Pages: 406

Go To