Book Name:Wasail e Bakhshish

اجازت دو کہ میں   بغداد حاضِر ہو کے پھر کر لوں 

تمہارے نیلے گنبد کا نظارہ یاشہِ بغداد

غمِ شاہِ مدینہ مجھ کو تم ایسا عطا کر دو

جگر ٹکڑے ہو دل بھی پارہ پارہ یاشہِ بغداد

مدینے کا بنا دو تم مجھے کچھ ایسا دیوانہ

پھروں   دیوانگی میں   مارا مارا یاشہِ بغداد

 

خدا کے خوف سے روئے نبی کے عشق میں   روئے

عطا کر دو وہ چشمِ تر خدارا یاشہِ بغداد

گناہوں   کے مَرَض نے کر دیا ہے نیم جاں   مجھ کو

تمہیں   آ کے کرو اب کوئی چارہ  یاشہِ بغداد

مجھے اچھا بنا دو مرشِدی بے شک یقیناً ہیں 

مرے حالات تم پر آشکارا یاشہِ بغداد

سُدھارو مرشِدی لِلّٰہ اپنے ڈِھیٹ بَرْدے([1])کو

نہ جانے تم نے کتنوں   کو سُدھارا یاشہِ بغداد

ہوئی جاتی ہے اُوجَڑ اب مِری اُمّید کی کھیتی

بھرَن برسا دو رحمت کی خدارا یاشہِ بغداد

کرم میراں  !مِرے اُجڑے گلستاں  میں  بہارآئے

خَزاں   کا رُخ پِھرا دو اب خدارا یاشہِ بغداد

 

شہا! خیرات لینے کو سَلاطینِ زمانہ نے

تِرے دربار میں   دامن پَسارا یاشہِ بغداد

 



[1]      غلام۔



Total Pages: 406

Go To