Book Name:Wasail e Bakhshish

قابلِ رشک ہے   وَاللّٰہ  وہ  قسمت  والا

تو نے کُتّا جسے اپنا ہے بنایا یاغوث

قلبِ مُردہ کو بھی ٹھوکر سے جِلا دو مرشِد

بالیقیں   تم نے تو مُردوں   کو جِلایا یاغوث

 

آفتوں   میں   ہوں   گرفتار، مدد کو آؤ

آہ! دنیا کے غموں   نے ہے ستایا یاغوث

’’لاتَخَف ([1]) ‘‘ حَشر میں  کہتے ہوئے آجانا تم

جیسے دنیا میں   یہ ارشاد سنایا یاغوث

تیرے دامن سے لپٹ کر میں   مچل جاؤں   گا

مجھ کو جس دم سرِمحشر نظر آیا یاغوث

میں   جہنَّم میں  نہ اَب جاؤں   گا اِن شائَ اللّٰہ

رَہنُما تم کو جو میں   نے ہے بنایا یاغوث

شاہِ بغداد! ہو عطّارؔ پہ نظرِ رَحمت!

خالی کاسہ لئے ہے دُور سے آیا یاغوث

 

تِرے در سے ہے منگتوں   کا گزارا یاشہِ بغداد

تِرے در سے ہے منگتوں   کا گزارا یاشہِ بغداد

یہ سُن کر میں   نے بھی دامن پَسارا یاشہِ بغداد

مِری قسمت کا چمکا دو ستارہ یاشہِ بغداد

دکھا دو اپنا چہرہ پیارا پیارا یاشہِ بغداد

 



[1]       ’’ لَا تَخَفْ‘‘ سے غوثِ پاک کے اس ارشاد :مُرِیْدِیْ لَا تَخَفْ اَللّٰہُ رَبِّیْ(یعنی میرے مرید مت ڈر  اللّٰہ عَزَّوَجَلَّ  میرا پروردگار ہے) کی طرف اشارہ ہے۔



Total Pages: 406

Go To