Book Name:Wasail e Bakhshish

بہرِخاکِ کربلا خواجہ پیا خواجہ پیا

دل سے دنیا کی مَحبَّت کی مصیبت دُور ہو

دیدو عشقِ مصطَفٰے خواجہ پیا خواجہ پیا

تیری اُلفت میں   جیوں   تیری مَحبَّت میں   مَروں 

ہو کرم ایسا شہا!خواجہ پیا خواجہ پیا

جھولیاں   بھرتے ہو منگتوں   کی مجھے بھی ہو عطا

حصّۂ جودو سخا خواجہ پیا خواجہ پیا

نَے میں   سائل راج کا نَے تخت کا نَے تاج کا

میں   فَقَط منگتا ترا خواجہ پیا خواجہ پیا

یہ سگِ دربار خواجہ! طالبِ دیدار ہے

چہرۂ انور دِکھا خواجہ پیا خواجہ پیا

 

دشمنوں   میں   ہوں   گِھرا صِدّیق کا صَدْقہ بچا

المدد خواجہ پیا خواجہ پیا خواجہ پیا

اُونٹ بیٹھے اُٹھ نہ پائے سارْباں  ([1])حیران تھے

یہ کرامت واہ وا! خواجہ پیا خواجہ پیا

 آ گیاسار ا ’’اَناساگر ([2])‘‘تری چھاگَل([3]) میں   خوب

شان تیری مرحبا! خواجہ پیا خواجہ پیا

اپنی منزل سے کبھی بھی وہ بھٹک سکتا نہیں   

جس کے تم ہو رہنُما خواجہ پیا خواجہ پیا

 



[1]       اُونٹ والے،اُونٹ چلانے اور ہانکنے والے۔(فرہنگ آصِفیہ ج۲ ص ۷)۔

[2]       اجمیر شریف کے تالاب کانام ۔

[3]     چھوٹی سی مَشک ۔ مِٹّی کا وہ برتن جس میں   مُسافِر پانی بھر لیتے ہیں  ۔

(رنگین فیروز اللغات ص ۵۷۸)۔



Total Pages: 406

Go To