Book Name:Wasail e Bakhshish

فیض کا دریا بہا دو سرورا داتا پیا

مسجِدیں   آباد ہوں   اور سنّتیں   بھی عام ہوں   !

فیض کا دریا بہا دو سرورا داتا پیا

سارے منگتے اپنے چِہرے پر سجا ئیں   داڑھیاں 

فیض کا دریا بہا دو سرورا داتا پیا

تختِ شاہی کی نہیں   ہے آرزو عطارؔ کو

اِس کو بس کُتّا بنالو اپنا یا داتا پیا

 

اپنے قدموں   میں   بلا خواجہ پیا خواجہ پیا

(یکم رجبُ المرجب۱۴۳۴ھ۔بمطابق2013-05-11)

اپنے قدموں   میں   بلا خواجہ پیا خواجہ پیا

اور جلوہ بھی دکھا خواجہ پیا خواجہ پیا

ہو کرم بَرحالِ ما خواجہ پیا خواجہ پیا

از پئے داتا پیا خواجہ پیا خواجہ پیا

آہ! کتنی دیر سے میں   دور ہوں   اجمیر سے

جانے میں   کب آؤں   گا خواجہ پیا خواجہ پیا

مصطَفٰے کی انبیا کی ہر صحابی اور ولی

کی مَحبَّت ہو عطا خواجہ پیا خواجہ پیا

یا مُعینَ الدّین اجمیری! کرم کی بھیک دو

از پئے غوث و رضا خواجہ پیا خواجہ پیا

شَبَّرو شَبِّیر کا صَدْقہ بلائیں   دُور ہوں 

اے مِرے مشکلکشا خواجہ پیا خواجہ پیا

 

آفتوں   کی آندھیاں   کر دُور دے اَمْن و اماں 

 



Total Pages: 406

Go To