Book Name:Wasail e Bakhshish

اجمیر بلایا مجھے اجمیر بُلا یا

اجمیر بُلایا مجھے اجمیر بُلایا                         اجمیر بُلا کر مجھے مہمان بنایا

ہو شکر ادا کیسے کہ مجھ پاپی کو خواجہ             اجمیر بلا کر مجھے دربار دکھایا

سلطانِ مدینہ کی مَحَبَّت کا بھکاری               بن کر میں   شہا! آپ کے دربار میں   آیا

دنیا کی حکومت دونہ دولت دو نہ ثروت        ہر چیزملی جامِ مَحَبَّت جو پلایا

قدموں   سے لگا لو مجھے قدموں   سے لگا لو       خواجہ ہے زمانے نے بڑا مجھ کو ستایا

ڈوبا ابھی ڈوبا مجھے لِلّٰہ سنبھالو                  سیلاب گناہوں   کا بڑے زور سے آیا

ہو چشم شفا  اب تو شہا! سوئے مریضاں             عصیاں   کے مَرَض نے ہے بڑا زور دکھایا

سرکارِ مدینہ کا بنا دیجئے عاشِق                   یہ عرض لیے شاہ کراچی سے میں   آیا

یا خواجہ کرم کیجئے ہوں   ظُلمتیں   کافور          باطِل نے بڑے زور سے سر اپنا اٹھایا

عطارؔ کرم ہی سے تِرے جم کے کھڑا ہے

دشمن نے گِرانے کو بڑا زور لگایا

 

ہو مد ینے کا ٹکٹ مجھ کو عطا دا تا پیا

ہو مدینے کا ٹِکَٹ مجھ کو عطا داتا پیا

آپ کو خواجہ پِیا کا واسِطہ داتا پیا

مجھ کو رَمضانِ مدینہ کی زیارت ہو نصیب

خرچ ہو راہِ مدینہ کا عطا داتا پیا

دو نہ دو مرضی تمہاری تم مدینے کا ٹِکَٹ

میں   پکارے جاؤں   گا داتا پِیا داتا پیا

دولتِ دنیا کا سائل بن کے میں   آیا نہیں   

مجھ کو دیوانہ مدینے کا بنا داتا پیا

کاش میں   رویا کروں  عشقِ رسولِ پاک میں 

سوز دو ایسا پئے احمد رضا داتا پیا

 



Total Pages: 406

Go To