Book Name:Wasail e Bakhshish

چشمِ نم دیجئے اپنا غم دیجئے                     از طفیلِ رضا، یاشہِ کربلا

خواب میں   آئیے، جلوہ دکھلائیے             ازپئے مصطَفٰے، یاشہِ کربلا

اس گنہگار کو، خوار و بدکار کو                   جیسا بھی ہے نبھا، یاشہِ کربلا

ابنِ شاہِ عرب!مرضِ عِصیاں   سے اب      دیدو مجھ کو شفا، یاشہِ کربلا

 

ایک مظلوم کو اپنے مغموم کو                   آفتوں   سے چھُڑا، یاشہِ کربلا

میرے اُجڑے چمن پر کرم کی بھَرَن ([1])       اب تو برسا شَہا، یاشہِ کربلا

دل کو مل جائے چَین المدد یاحُسین           ہوں   بَہُت غمزدہ، یاشہِ کربلا

اب ہو رخصت خَزاں  ، کھِل اُٹھے گُلْ سِتاں     وہ چلا دو ہوا، یاشہِ کربلا

ذُوالفقارِ علی، جب عَدُو پر چلی                 قَہر سا چھا گیا، یاشہِ کربلا

آہ!دشمن مرے، خوں   کے پیاسے ہوئے      لیکے تلوار آ، یاشہِ کربلا

سن لو فریاد کو آؤ امداد کو                       ابنِ مُشکلکشا، یاشہِ کربلا

ہو مُیَسَّر امام اب شہادت کا جام                 کردو حق سے دُعا، یاشہِ کربلا

جانبِ کربلا کاش! عطارؔ کا

چل پڑے قافِلہ، یاشہِ کربلا

 

'' جو اللہ  عزوجل اور قیامت کے دن پر ایمان رکھتاہے اسے چاہیے کہ اچھی بات کہے یا خاموش رہے۔''

 

  (بخاری ، رقم ۶۴۷۵ ، ج۴، ص ۲۴۰)

 

 

بغداد کے مسافر میرا سلام کہنا

(یکم ربیع الآخر۱۴۳۴ھ۔بمطابق2013-02-12)

بغداد کے مسافِر میرا سلام کہنا

رو رو کے مُرشِدی سے میرا پیام کہنا

یا پیر غوثِ اعظم!قسمت کُھلے گی کس دم؟

 



[1]     زورو شور کی بارش جوجل تھَل کردے ۔



Total Pages: 406

Go To