Book Name:Wasail e Bakhshish

ہمارے ہاتھ میں   دامن سدا فاروقِ اعظم کا

 

بھٹک سکتا نہیں   ہرگز کبھی وہ سیدھے رستے سے

کرم جس  بَخْت وَر پر ہو گیا فاروقِ اعظم کا

خدا کی خاص رحمت سے محمد کی عنایت سے

جہنَّم میں   نہ جائے گا گدا فاروقِ اعظم کا

سدا آنسو بہائے جو غَمِ عشقِ محمد میں 

دے ایسی آنکھ یارب! واسِطہ فاروقِ اعظم کا

مجھے حجّ وزیارت کی سعادت اب عنایت ہو

وسیلہ پیش کرتا ہوں   خدا فاروقِ اعظم کا

الٰہی! ایک مدّت سے مِری آنکھیں   ترستی ہیں 

دکھا دے سبز گنبد واسِطہ فاروقِ اعظم کا

شہادت اے خدا! عطّارؔ کو دیدے مدینے میں 

کرم فرما الٰہی! واسِطہ فاروقِ اعظم کا

 

پھر بُلا کربَلا یا شہِ کربَلا

پھر بُلا کربلا، یاشہِ کربلا                        اپنا روضہ دکھا، یاشہِ کربلا

تیرے دربار کو، اس کے انوار کو              آہ! کب پاؤں   گا، یاشہِ کربلا

میں  نے چُومی نہیں  ‘ کربلا کی زمیں             ایک عرصہ ہوا، یاشہِ کربلا

کوچۂ پاک کو، خَس کو خاشاک کو               چوموں   آکر شہا، یاشہِ کربلا

ایسا پاؤں   جُنُوں  ([1])، دھڑکنوں   میں  سُنوں       کربلا کربلا، یاشہِ کربلا

ازپئے چار یار، اے شہِ ذی وقار              اپنا شیدا بنا، یاشہِ کربلا

 



[1]     دیوانگی ۔



Total Pages: 406

Go To