Book Name:Wasail e Bakhshish

بعدِ خُلفائے ثَلاثہ سب صَحابہ سے بڑا

آپ کو رُتبہ ملا مولیٰ علی مشکلکُشا 

قَلعۂ خیبر کا دروازہ اُکھاڑا آپ نے

مرحبا! صد مرحبا! مولیٰ علی مشکلکُشا

پیکرِ جُودو سخا تُو میں   فقیر وبے نوا ([1])

تو ہے داتا میں   گدا مولیٰ علی مشکلکُشا

شَبَّر و شَبّیر کے والد ہوتم ماں   فاطِمہ

سیِّد و سردارِ ما([2])مولیٰ علی مشکلکُشا

میں   گناہوں   کا مریض اور آپ ہیں   میرے طبیب

دیجئے مجھ کو شِفا مولیٰ علی مشکلکُشا

جان کو خطرہ ہے  میری دشمنوں   سے ہر گھڑی

المدد شیرِ خدا  مولیٰ علی مشکلکُشا

 

حیدرِ ([3])کرّار([4])! لے کے آؤ تیغِ ذُوالفِقار

زورِ  دشمن بڑھ چلا مولیٰ علی مشکلکُشا

مغفِرت کروایئے جنت میں   لے کے  جایئے

واسِطہ حَسنَین کا مولیٰ علی مشکلکُشا

دل سے دنیا کی مَحبَّت دُور کر کے یا علی!

دیدو عشقِ مصطَفٰے مولیٰ علی مشکلکُشا

از پئے غوثُ الورا ہم کو نَجف([5])بُلوایئے

 



[1]     بے سروسامان ۔

[2]     ہمارے سردار ۔

[3]     شیر ۔

[4]     بار بار حملہ کرنے والا۔بھگانے والا ۔

[5]     عراق کے اُس شہر کا نام جہاں   مولیٰ علیکَرَّمَ اللّٰہُ وَجہَہُ الکریم  کا مزارِ فائض الانوار ہے ۔



Total Pages: 406

Go To