Book Name:Wasail e Bakhshish

اِذن، طیبہ کا بارِ دِگر چاہئے

غصہ  ایمان کو خراب  کرتا ہے

خاتم المرسلین رحمۃ للعلمین کا فرمانِ عبرت نشان غصہ نہ کیاکرو کیونکہ غصہ ایمان کو اس طرح خراب کردیتاہے جیسے ایلوا (ایک کڑوے درخت کا جما ہوا رَس ) شہد کو خراب کردیتاہے۔''(شعب الایمان، ج۶، ص۳۱۱، الحدیث:۸۲۹۴)

 

 

یانبی ! بس مدینے کا غم چاہئے

یانبی! بس مدینے کا غم چاہئے              کچھ نہیں  اور رب کی قسم چاہئے([1])

میرا سینہ مدینہ بنا دیجئے                    چاک قلب و جگر چشمِ نم چاہیے

بس مدینے کی یادوں   میں   کھویا رہوں       فکر ایسی شہِ محترم چاہیے

یاد میں   تیری روتا تڑپتا رہوں               ایسا غم تاجدارِ حرم چاہیے

تاجِ شاہی نہ دو، بادشاہی نہ دو             بس تمہاری نگاہِ کرم چاہیے

میرے جینے کا سامان ہے بس یِہی          تیرا لُطف و کرم دم بدم چاہیے

آتَشِ شوق آقا بھڑکتی رہے              مجھ کو غم یانبی تیرا غم چاہیے

 

جاں   بَلَب کے سِرہانے اب آجایئے          جامِ دیدار شاہِ حرم چاہیے

تیرے قدموں   میں   موت اے حبیب خدا!     اے  شَہَنشاہِ عَرَب  و  عَجَم  چاہیے

دیدو آقا بقیعِ مبارَک مجھے                     کچھ نہیں   اور شہِ محترم چاہیے

مغفِرت کی تمہارے کرم سے مجھے            اب سند یاشفیعِ اُمَم چاہیے

سارے دیوانے آقا مدینے چلیں              اِذن طیبہ کا شاہِ امم چاہیے

تیرا سرکار ہوں   گرچِہ بدکار ہوں               تیری رَحمت مجھے ہر قدم چاہیے

چھوڑیں   عاداتِ بد بھائیو! موت کی          یاد ہر آن اور دم بدم چاہئے

جو بھی سرکار پڑھ لے ہمارا کلام               وہ تڑپ اٹّھے ایسا قلم چاہئے

 



[1]     اگر حقیقی معنوں   میں   کسی کو ’’ مدینے کا غم‘‘ یعنی مدینۂ منوَّرہ زادَھَااللّٰہُ شَرَفًاوَّ تَعظِیْماً  کا کامل عشق مل گیا وہ سچّا عاشقِ رسول بن گیا اور عاشقِ رسول وہی ہوتا ہے جو ’’ عاشقِ الٰہی ‘‘ بھی ہوتا ہے ۔ جب کوئی ’’ عاشقِ خدا و مصطَفٰے ‘‘ کا منصب پالے تو اسے اللّٰہ عَزَّوَجَلَّ کی رضا کی منزل مل گئی اور جس سے اللّٰہ عَزَّوَجَلَّ راضی ہو گیا اس کاایمان پر خاتمہ ہو گا اور یقینا وہ جنّت میں  داخل ہو گا۔ اِسی لئے عرض کیا ہے کہ مجھے ’’ مدینے کا غم ‘‘ چاہئے کہ یہ نصیب ہو جانے کی صورت میں   خدا کی قسم اور کوئی مطالبہ ہی نہیں   کہ غمِ مدینہ کے ذریعے سبھی کچھ حاصِل ہو جائے گا۔ ان شائَ اللّٰہ عَزَّوَجَلَّ۔



Total Pages: 406

Go To