Book Name:Wasail e Bakhshish

دیوانو! آؤ آمنہ بی بی کے گھر چلیں              صبحِ بہاراں   ہو گئی سرکار آگئے

لہراؤ سبز پرچم اے اسلامی بھائیو!             گھر گھر کرو چَراغاں   کہ سرکار آگئے

ہوتے ہی پیدا، کرتے ہیں   اُمّت کو یاد آپ   اُمّت کی مغفِرت کے طلب گار آگئے

 

رکّھو گناہ گارو نہ اب خوف حشر کا           اے مجرِمو! تمہارے طَرَفدار آگئے

اے غمزدو! تمہاری تو بس عید ہو گئی       آفت زدو! تمہارے مددگار آگئے

یارب! کرم ہو از پئے مِیلادِمصطَفیٰ        بخشِش کی آس لے کے گنہگار آگئے

صَدقہ حُضور! آپ کے میلادِ پاک کا       دیدو شِفا گناہوں   کے بیمار آگئے

صَدقہ بٹے گا آمِنہ بی بی کے گھر میں   آج      کَشکَول لے کے دوڑتے نادار آگئے

پُھولا نہیں   سماتے ہیں   عطّارؔ آج تو

دنیا میں   آج حامیِ عطّارؔ آگئے

 

فرمانِ مصطَفےٰ : صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وَسَلَّمجس نے مجھ پرروزِ جُمُعہ دو سو بار دُرُود پاک پڑھا اُس کے دو سو سال کے گناہ مُعاف ہوں گے۔(کنزالعمال، ج۱، ص۲۵۶، حدیث ۲۲۳۸)

 

مُجھ کو دنیا کی دولت نہ زَر چاہئے

مُجھ کو دنیا کی دولت نہ زَر چاہئے             شاہِ کوثر کی میٹھی نَظَر چاہئے

ہاتھ اُٹھتے ہی بَر آئے ہر مُدَّعا                 وُہ دُعاؤں   میں   مولیٰ اثر چاہئے

عاشِقانِ نبی کے ہے دل کی صَدا            سبز گنبد کے سائے میں   گھر چاہئے

ذَوق بڑھتا رہے اَشْک بہتے رہیں             مُضطَرِب قَلب اور چَشمِ تر چاہئے

رات دِن عِشق میں  تیرے تڑپاکروں      یانبی! ایسا سَوزِ جِگر چاہئے

یاخدا جسم سے جَان جب ہو جُدا             جلوۂ شاہ پیشِ نظر چاہئے

بس مدینے میں   دوگز زمیں   دیجئے           اور نہ کچھ اے شہِ بحروبر چاہئے

ہم غریبوں   کو روضے پہ بُلوائیے             راہِ طیبہ کا زادِ سفر چاہئے

اپنے عطارؔ پر ہو کرم بار بار

 



Total Pages: 406

Go To