Book Name:Wasail e Bakhshish

 

مجھ پہ چشمِ کرم کیجئے

مجھ پہ چشمِ کرم کیجئے                                لطف شاہِ اُمَم کیجئے

از طفیلِ بِلال و رضا                                اب تو  نَظرِ کرم کیجئے

ازطفیلِ حُسین و حَسن                            دُور رنج و اَلَم کیجئے

کاش! طیبہ کی ہو حاضِری                         یانبی! اب کرم کیجئے

اب بقیعِ مبارَک عطا                               تاجدارِ حرم کیجئے

سبز گنبد کا چمکا وہ نور                                زائرو! سر کو خَم کیجئے

ذِکر سرکار کا بھائیو!                                 ہر گھڑی دم بدم کیجئے

دور کر کے زمانے کے غم                        مَرحَمَت اپنا غم کیجئے

میرا سینہ مدینہ بنے                                مجھ پہ ایسا کرم کیجئے

اب خدارا شفاعت مری                           یاشفیعِ اُمَم کیجئے

ازپئے پیر و مرشِد عطا                            اپنا غم چشمِ نم کیجئے

آہ! عطارؔ بدکار ہے

لِلّٰہ اِس پرکرم کیجئے

 

خوشیاں   مناؤ بھائیو! سرکار آ گئے

خوشیاں   مناؤ بھائیو! سرکار آگئے               سرکار آگئے، شَہِ اَبرار آگئے

سب جھوم جھوم کر کہو سرکار آگئے          دونوں   جہاں   کے مالِک و مختار آگئے

وہ غمزدوں   کے حامی و غم خوار آگئے          دُکھیوں   کے بے کسوں   کے مدد گار آگئے

وہ مسکراتے خلق کے سردار آگئے           چمکاتے اپنا چہرہ چمکدار آگئے

ہے آج جشنِ آمدِ سرکار  چار  سو                دنیا میں   آج نبیوں   کے سالارآگئے

خوشیوں   کے لمحے آگئے دیوانے جھوم اُٹھے     عیدوں   کی عید آگئی سرکار آگئے

دائی حلیمہ میں   تری تقدیر پر نثار               گودی میں   تیری احمدِ مختار آگئے

پڑھتے دُرُود سارے ہی تعظیم کو اُٹھو      اُٹھ کر پڑھو سلام کہ سرکار آگئے

 



Total Pages: 406

Go To