Book Name:Wasail e Bakhshish

عادتِ عِصیاں   نہیں   جاتی حضور                آپ ہی کچھ جانِ رَحمت کیجئے

مجھ کو توفیقِ عبادت ہو عطا                     مجھ کو پابندِ شریعت کیجئے

سنّتوں   کی ہر طرف آئے بہار                  دُور فیشن کی نُحُوست کیجئے

یانبی! مجھ کو! بقیعِ پاک میں                        بَہرِ مدفن جا عنایت کیجئے

ہُوں   نہایت ہی ضعیف و ناتُواں                 میری دشمن سے حفاظت کیجئے

ہو عطا سوزِ بِلال آقا مجھے                       اور اپنا غم عنایت کیجئے

گُھپ اندھیرے میں   ہوں   تنہا اَلمدد          قبر روشن نورِ عزّت کیجئے

عیب محشر میں   نہ کُھل جائیں   کہیں               سایۂ دامانِ رَحمت کیجئے

گرمیِ محشر سے جاں   ہے مُضطَرِب            جامِ کوثر اب عنایت کیجئے

مجرِموں   کی صَف میں   ہوں   آقا کھڑا          یانبی! آکر شَفاعت کیجئے

 

کربلا والوں   کے صدقے مجھ سے دور          یانبی!  رنج  و مصیبت   کیجئے

مختصر سی زندگی ہے بھائیو!                    نیکیاں   کیجے نہ  غفلت  کیجئے

گر رِضائے مصطَفٰے درکار ہے                         سنّتوں   کی خوب خدمت کیجئے

سُنَّتیں   اپنا کے حاصِل بھائیو!                 رَحمتِ مولیٰ سے جنّت کیجئے

عیدِ مِیلادُالنَّبی پر بھائیو!                       خوب اظہارِ مَسرَّت کیجئے

ہِجر کے ماروں   پہ بھی چشمِ کرم!               اِذن، طیبہ کا عنایت کیجئے

میرے چہرے پر کفن ڈھک دیجئے                  ساتھیو رُسوا مجھے مت کیجئے

اب نِقابِ رُخ اُلٹ دیجے حُضُور               حاضِرِ دربار پھر بدکار ہے

بڑھتے جاتے ہیں   گنہ عطارؔ آہ!                 جاں   بلب پر چشمِ رَحمت کیجئے

چشمِ رَحمت جانِ رَحمت کیجئے                   کچھ تو اظہارِ نَدامت کیجئے

سبز گنبد پر فِدا ہوجایئے

کیجئے عطارؔ ہمّت کیجئے

 



Total Pages: 406

Go To