Book Name:Wasail e Bakhshish

اِذن، عطارؔ کو اب حُضُور

حاضِری کا عطا کیجئے

 

مجھ پہ چشمِ شِفا کیجئے

مجھ پہ چشمِ شِفا کیجئے                                    دُور بارِ گُنہ کیجئے

آہ! عِصیاں   کی طُغیانیاں                               اب مدد ناخدا کیجئے

ہو گیا قلب ہائے سیاہ                                 لطف نورِ خدا کیجئے

کوشِشوں  سے بھی چُھٹتے نہیں                           اِن گناہوں   کا کیا کیجئے

ہائے!عِصیاں  نے توڑی کمر                            کچھ مِرا، مصطَفٰے کیجئے

مال کے جال میں   پھنس گیا                         مجھ کو آقا رِہا کیجئے

بارِ عصیاں   تلے دب گیا                              آپ آ کر کھڑا کیجئے

دردِعِصیاں   سے مجھ کو شِفا                          اے مَسیحا! عطا کیجئے

قلب پتّھر سے بھی سخت ہے                           اِس کو نرمی عطا کیجئے

چارہ گر([1])چھوڑ کر چل دیئے                       چارۂ لا دوا کیجئے

جگمگا دیجے قلبِ سیاہ                                 لُطف بدرُ الدُّجیٰ کیجئے

اب گناہوں   کی عادت چُھٹے                         چشمِ رَحمت شہا! کیجئے

اب کرم سُوئے خَستہ جگر                           شاہِ ارض و سما کیجئے

چاند چِیرا تھا جُوں  ، سُوئے دل                              اِک اِشارہ ذرا کیجئے

 

حُبِّ دنیا کی مستی سُوار                                 ہو گئی کچھ مِرا کیجئے

چشمِ رَحمت حبیبِ خدا                                سُوئے بے دست و پا کیجئے

یانبی! آپ ہی کچھ علاج                                نفس و شیطان کا کیجئے

راہ بھولا چُھٹا کارواں                                      رہبری رہنما کیجئے

دین پر استِقامت عطا                                  از طفیلِ رضا کیجئے

مثلِ بِسمل تڑپتا رہوں                                   درد ایسا عطا کیجئے

سنَّتوں   کی بہاریں   عطا                                  یاحبیبِ خدا کیجئے

بھائیو! گر سُکوں   چاہئے                                سُنّتوں   پر چلا کیجئے

 



[1]     ڈاکٹر ۔ طبیب ۔



Total Pages: 406

Go To