Book Name:Wasail e Bakhshish

لو مدینہ قریب آگیا                                  زائرو! آنکھ وا کیجئے

سبز گُنبد پر اے زائرو!                              جان اپنی فِدا کیجئے

دے کے غم اپنا دنیا کے ہر                         رنج و غم کی دوا کیجئے

رات دن کاش! رویا کروں                             ایسی رِقّت عطا کیجئے

اِک نظر ہی کی تو بات ہے                           مست و بیخود شہا کیجئے

کوئی پَھیرا غریبوں   کے گھر                          خیر سے سرورا کیجئے

زورِ طوفان ہے ناخدا                                 پار بیڑا مرا کیجئے

ماہِ مِیلاد پھر آگیا                                      ذِکر، مِیلاد کا کیجئے

چَھیڑنا ہو جو شیطان کو                                اُن کا چرچا کیا کیجئے

ازپئے شاہِ کرب و بلا                                 دُور رنج و بلا کیجئے

اپنے قدموں   میں   مدفن عطا                         یارسولِ    خدا    کیجئے

قبر میں   گُھپ اندھیرا ہے آپ                          آکر اب چاندنا کیجئے

 

پیارے آقا خزانہ مجھے                                آنسوؤں   کا عطا کیجئے

حاسِدوں   سے حسد کا مرض                        دور یامصطفٰی کیجئے

سارے اَعدا کا خانہ خراب                          یاعلی مرتَضیٰ کیجئے

دشمنوں   سے نہ ہرگز ڈروں                           حوصلہ وہ عطا کیجئے

میرے سارے محبّین کو                           جامِ اُلفت عطا کیجئے

جس قَدَر میرے اَحباب ہیں                         شاہ! سب کا بھلا کیجئے

آہ! مجرم ہے مِیزان پر                              پَلّہ بھاری مرا کیجئے

پاس حُسنِ عمل ہے کہاں  !                          لطف شاہِ دَنیٰ کیجئے

آہ! تاریکیِ پُل صِراط!                                رَحم شمسُ الضُّحٰی کیجئے

فردِ جُرم آہ! عائد ہوئی                                اب شَفاعت شہا کیجئے

لے کے دوزخ ملائک چلے                           آپ آکر رِہا کیجئے

کھانہ جائے کہیں   مجھ کو آگ                       رحم و لطف و عطا کیجئے

اب شَفاعت پئے اہلِ بیت                          یاشفیعَ الورَا کیجئے

چار یاروں   کا صدقہ شہا                                خُلد میں   جا عطا کیجئے

 



Total Pages: 406

Go To