Book Name:Wasail e Bakhshish

ولادت کا صدقہ نِقاب اب اٹھا دو             لیے ہم سب امیدِ دیدار آئے

ولادت کا صدقہ جگہ بَہرِ مرکز([1])              ملے یہ لئے عرض سرکار آئے

ولادت کا صدقہ پڑوسی بنانا                    شہا خُلد میں   جب یہ بدکار آئے

ولادت کا صدقہ شہا زندگی بھر

مدینے میں   ہر سال عطارؔ آئے

 

اپنا غم یَا شہِ انبِیا دیجئے چشمِ نَم یاحبیبِ خدا دیجئے

اپنا غم یاشہِ انبیا دیجئے                                          چشمِ نَم یاحبیبِ خدا دیجئے

چَاک سینہ شہِ دوسَرا دیجئے                                  قلب بے چَین یامُصطفٰے دیجئے

مُجھ کو آقا مدینے بُلا لیجئے                                       اور مہمان اپنا بنا لیجئے

دَر پہ بُلوا کے جلوہ دِکھا دیجئے                                  میرا سینہ مدینہ بنا دیجئے

التجا ہے مِری یَاحبیبِ خدا                                    اشکبار آنکھ ہو جائے مجھ کو عطا

اَز طُفیلِ بِلال و اُویس و رضا                                  آنسوؤں   کا خزانہ شہا دیجئے

سوزِ اُلفت کے دل میں   جَلائے دیے                         یادِ طیبہ میں   جو جا رہے ہیں   جئے

اور بے تاب ہیں   حَاضِری کے لئے                          اُن کو میٹھا مدینہ دکھا دیجئے

مجھ کو اَحباب تنہا چلے چھوڑ کر                                 جَلد لیجے خبر آمِنہ کے پِسر!

گُھپ اندھیرا ہے یاشاہِ جِنّ و بَشَر                             نُور سے لَحد اب جگمگا دیجئے

ہے گناہوں   کا اَنبار سلطانِ دیں  !                             نیکیاں   میرے پلّے میں   کُچھ بھی نہیں

چَاک ہوجائے پردہ نہ میرا کہیں                               اب خدا سے شہا! بخشوا دیجئے

کاش! نیکی کی دعوت میں   دوں   جابَجا                         سُنتیں   عَام کرتا رہوں   جابجا

گر سِتَم ہو اُسے بھی سَہُوں   جابَجا                              ایسی ہمّت حبیبِ خدا دیجئے

پھر عَرَب کی حسیں   وادِیاں   دیکھنے                           سبز گُنبد کی ہریالیاں   دیکھنے

رَوْضۂ پاک کی جالِیاں   دیکھنے                                اِذن بدکار کو مُصطَفٰے دیجئے

ہے تمنّائے عطّارِؔ اَندَوہ([2]) گِیں                                ہو نگاہِ کرم اس پہ سلطانِ دیں

بس بقیعِ مُبارک میں   دو گز زمیں                               از طفیلِ شہِ کربلا دیجئے

 

اِذْنِ طیبہ عطا کیجئے

اِذنِ طیبہ عطا کیجئے                                    پھر کرم مصطَفٰے کیجئے

پھر مدینے میں   آجائیں   ہم                          ایسا اِحساں   شہا کیجئے

 



[1]      اَلْحَمْدُ لِلّٰہ عَزَّوَجَلَّ  وِلادَتِ پاک کے صدقے بابُ المدینہ کراچی میں   پرانی سبزی منڈی کے پاس دعوتِ اسلامی کیلئے تقریباً دس ہزار گز جگہ ملی اوراب وہاں   عالمی مَدَنی مرکز فیضانِ مدینہ اور جامعۃ المدینہ کی عالی شان عمارت قائم ہے۔

[2]     اندوہ گیں   یعنی رنجیدہ ۔



Total Pages: 406

Go To