Book Name:Wasail e Bakhshish

عطا ہو سَنَد مَغفِرت کی عَطا ہو                               تِرے دَر پہ تیرے گنہگار آئے

اِدھر بھی مَسیحا نِگاہِ شِفا ہو                                  تِرے دَر پہ عِصیاں   کے بیمار آئے

گُناہوں   کی کثرت سے گھبرا گئے جَب                     وُہ محشر میں   سُوئے گنہگار آئے

ہوئی قبر روشن ہماری اُسی دم                                لئے جب وہ چِہرہ چمکدار آئے

 

پئے پِیر و مرشِد ہمیں   اپنا کہدو               یہ ہم آرزو لے کے دربار آئے

شہا تجھ سے تجھ ہی کومَانگیں   گے ہم تو         ترے دَر پہ جس روز سرکار آئے

دوا ہر مَرض کی ہے خاکِ مدینہ               شِفا پائے دَر پر جو بیمار آئے

سرِ حَشر دامن میں   لیں   گے اُسے جو          نَدامت سے روتا گنہگار آئے

ترے عشق میں   ایسا ہوجاؤں   بے خود        کبھی ہوش مجھ کو نہ سرکار آئے

اِشارہ ملے کاش! جنّت کا فوراً                  سرِ حشر جس دم یہ بدکار آئے

نگاہِ کرم ہو کرم جَانِ عالم                     دِلِ غم زَدہ لے کے غمخوار آئے

سدا سُنَّتیں   عَام کرتا رہوں   میں               اِسی حال میں   موت سرکار آئے

پَئے شاہِ کرب و بلا موت مُجھ کو               مدینے کی گلیوں   میں   سرکار آئے

سب اسلامی بہنوں   کو پَردہ عطا ہو            نہ پاس اِن کے ابلیسِ عَیّار آئے

سب اسلامی بھائی بھی فیشن سے بھاگیں       شہا! سُنّتوں   پر انہیں   پیار آئے

بُلالو مدینے میں   شاہِ مدینہ                     تڑپتا ہوا کاش! بدکار آئے

ترے غم میں   بے حَال ہو جائے آقا

پلٹ کے جو طیبہ سے عطارؔ آئے

 

نہ کیوں   آج جُھومیں   کہ سرکار آئے

نہ کیوں   آج جھومیں   کہ سرکار آئے          خدا کی خدائی کے مُختار آئے

نہ کیوں   بارہویں   پر ہمیں   پیار آئے           کہ آئے اِسی روز سرکار آئے

وہ آئے دو عالم کے مختار آئے                 لو آج آئے امّت کے غمخوار آئے

مَسرَّت سے ہم کیوں  نہ دھومیں  مچائیں            ہمارے شَہَنشاہ و سردار آئے

 



Total Pages: 406

Go To