Book Name:Wasail e Bakhshish

جس طرف دیکھئے گلشن میں   بہار آئی ہے

جس طرف دیکھئے گلشن میں   بہار آئی ہے               دل مگر دشتِ مدینہ کا تمنّائی ہے

خوشنما پھول گُلستاں   میں   کِھلے ہیں   لیکن                 میرا دل خارِ مدینہ ہی کا شیدائی ہے

مصطفٰے کی یہ عِنایت ہے کہ میرے دل میں                گنبدِ سبز کی تصویر([1])  اُتر آئی ہے

جب کبھی جس نے بھی پائی ہے جہاں   کی نعمت         آپ کے دستِ کرم ہی سے شہا پائی ہے

آہ! مجبور پہ ناچار پہ رنج و غم کی                           چار جانِب سے شہا! کالی گھٹا چھائی ہے

دے دے مولا! غمِ سلطانِ مدینہ دیدے               لب پہ رہ رہ کے یہی ایک دُعا آئی ہے

جب تڑپ کر دِلِ غمگیں   نے پُکارا آقا!                  فوراً اِمداد شہا آپ نے فرمائی ہے

کر دو سَیراب دِل تِشنہ کو اب تو ساقی!                  شربتِ دِید کا مدّت سے تمنّائی ہے

گُھپ اندھیرا تھا گناہوں   کا میں   صدقے جاؤں            لَحد خود آ کے مری نُور سے چمکائی ہے

نَزع میں  ، قَبر میں  ، مِیزانِ عمل اور پُل پر              ہر جگہ آپ کی نسبت ہی تو کام آئی ہے

سُنّتیں   شاہِ مدینہ کی تُو اپنائے جا                          دونوں   عالَم کی فَلاح اِس میں   مِرے بھائی ہے

مال و دولت کی ہَوَس دِل سے مٹادے یارب

سوزِ سرکار کا عطّارؔ تمنّائی ہے

بُلا وا دوبارہ پھر اِک بار آئے

بُلاوا دوبارہ پھر اِک بار آئے                               مدینے میں   آقا! گُنہگار آئے

مِرے اَشْک بہنے لگیں   کاش اُس دم                         نظر جُوں   ہی طیبہ کا گلزار آئے

دِلِ مُضْطَرِب([2])کی بڑھے بَیقراری                        تڑپ کر گِروں   جُوں   ہی دربار آئے

نظر میں   نہیں   کوئی جچتا گلستاں                           پسند اس کو صَحرائے سرکار آئے

ہے اپنی جگہ حُسن پُھولوں   کا لیکن                          پسند اس کو طیبہ ہی کا خار([3])آئے

مَحَلّات اُونچے نہیں   چَاہتا میں                                 مدینے کا قسمت میں   کُہسار آئے

عقیدت سے سر جُھک گیا اُس گھڑی جب                 نظر سبز گنبد کے انوار آئے

تِرے سبز گُنبد پہ جائے وُہ قرباں                             مدینے میں   جو کوئی اِکبار آئے

تمہاری شَفَاعَت کا حَقدار ٹھہرے                         جو دربار میں   بَخت بَیدار آئے

تِرے ہی کرم سے ہمارا بھرم ہے                          گناہوں   کا سر پر لئے بَار([4]) آئے

 



[1]     یہاں   سبز گنبد شریف کی سچ مُچ تصویر مراد نہیں   ،روضۂ رسول کی محبت مراد ہے۔

[2]     بیقرار ۔

[3]     کانٹا      ۔

[4]      بوجھ ۔



Total Pages: 406

Go To