Book Name:Wasail e Bakhshish

روتا ہوا پہنچا تھا روتا ہوا لَوٹا تھا

ہیں   وَصل کی دو گھڑیاں   پھر ہجرِ مدینہ ہے

دولت کی فِراوانی ہے مانگنا نادانی

بس اَصل میں   دولت تو اُلفت کا خزینہ ہے

عشّاق کی نظروں   میں   ویران گلستاں   ہیں   

دل ان کا تو شیدائے صَحرائے مدینہ ہے

عطّارؔ کو گر تُو بھی ٹھکرا دے کہاں   جائے

تیرا ہے یہ تیرا ہے گو لاکھ کمینہ ہے

 

صُبْح ہوتی ہے شام ہوتی ہے

(اس کلام کا مَطلَع (پہلا شعر) کسی نامعلوم شاعر کاہے اس کی بَحر پر کلام لکھا گیا ہے)

صُبح ہوتی ہے شام ہوتی ہے                           عُمر یونہی تمام ہوتی ہے

پوری کب آرزو مدینے کی                            شاہِ خیرالانام ہوتی ہے

مُصطَفٰے کا ہے جو بھی دیوانہ                              اُس پہ رَحمت مُدام([1]) ہوتی ہے

سنّتوں   کا ہے جو بھی شَیدائی                            اُس پہ دوزخ حرام ہوتی ہے

بختورزائروں   کی مکّے میں                               صبح، طیبہ میں   شام ہوتی ہے

یاحبیبِ خدا کرم کر دو!                               دُور کب غم کی شام ہوتی ہے

خوب انساں   کو کرتی ہے رُسوا                         جب زباں   بے لگام ہوتی ہے

گر تکبّر ہو دل میں   ذرّہ بھر                            سن لو جنّت حرام ہوتی ہے

مال و دولت کے عاشِقوں   کی ہر                          آرزو ناتَمام ہوتی ہے

یاعمر! دینِ حق کے اَعدا پر                             تَیغ کب بے نِیام ہوتی ہے؟

پائے رُتبہ شہید کا خُلد اُس                             کیلئے دو ہی گام([2])ہوتی ہے

سن لو ہر ایک نیک شخصیَّت                           قابِلِ اِحتِرام ہوتی ہے

اٹھو عطارؔ طیبہ چلتے ہیں

اُن کی رَحمت تو عام ہوتی ہے

 

 



[1]     ہمیشہ ۔

[2]     قدم   ۔



Total Pages: 406

Go To