Book Name:Wasail e Bakhshish

اے نُورِ خُدا آکر چمکادو پئے مرشِد

سرکار مِرے دِل کا بے نُور نگینہ ہے

جسمانی مریضوں   کو اللّٰہ شِفا دیدے

اچھّا ہے فَقَط وہ جو بیمارِ مدینہ ہے

 

تم جانتے ہو کیا ہے یہ دعوتِ اسلامی

فیضانِ مدینہ ہے فیضانِ مدینہ ہے

سرکار کی سُنَّت کی تبلیغ کئے جاؤ

جام آپ کے ہاتھوں   سے گر حَشر میں   پینا ہے

ہر دم مِرے ہونٹوں   پر بس ذِکرِمدینہ ہو

یہ میری تمنّا اے سلطانِ مدینہ ہے

عُشّاق تڑپتے ہیں   یادِ شہِ بَطْحَا میں   

آتا یہ جہاں   میں   جب بھی حج کا مہینا ہے

محبوب کا مستانہ سرکار کا دیوانہ

دل اس کا مدینہ ہے سینہ بھی مدینہ ہے

غم میٹھے مدینے کا اے کاش! کہ مل جائے

ارمان یِہی دِل میں   اے شاہِ مدینہ ہے

 

تُو کر دے عطا مجھ کوروتی ہوئی آنکھیں   اور

غم میں   ترے آقا جو جلتا ہوا سینہ ہے

افسوس مَرَض بڑھتا جاتا ہے گناہوں   کا

دے دیجے شِفا عَرض اے سرکارِ مدینہ ہے

دُنیا کا گلستاں   کیا جنت کی مہک سے بھی

خوشبو میں   کہیں   بڑھ کر آقاکا پسینہ ہے

 



Total Pages: 406

Go To