Book Name:Wasail e Bakhshish

لُطف جنّت سے بڑھ کر مدینے میں   ہے          میٹھے محبوب کا گھر مدینے میں   ہے

کیا ہوا بھی مُعطَّر مدینے میں   ہے         سب فَضا بھی منوَّر مدینے میں   ہے

کر کے ہجرت یہاں   آگئے مصطَفٰے       روشنی آج گھر گھر مدینے میں   ہے

جانتے ہو مدینہ ہے کیوں   دل پسند       دونوں   عالم کا سرور مدینے میں   ہے

سارے دیوانے بیتاب ہیں   اِس لئے          شاہ کی قبرِ انور مدینے میں   ہے

نور کی دیکھو برسات ہے چار سُو          کیا سماں   کیف آور مدینے میں   ہے

ہجرو فُرقت کے بیمار کو لے چلو           راحتِ جانِ مُضطَر مدینے میں   ہے

دور رہ کر ہے ویران سی زندگی           موت بھی کیف آوَر مدینے میں   ہے

ہے مدینے کا رُتبہ بڑا خُلد سے            کیوں   کہ محبوبِ داوَر مدینے میں   ہے

مالدارو! نہ اِتراؤ تم مال پر                  ان کا منگتا تَوَنگر مدینے میں   ہے

 

اپنی منزِل کو پالو گے آجاؤ تم             بھولے بھٹکوں   کا رہبر مدینے میں   ہے

بھول جاؤ گے پیرس کی سب رَونقیں        وہ سماں   رُوح پَروَر مدینے میں   ہے

دشمنو! مت اکیلا سمجھنا مجھے               میرا حامی و یاوَر مدینے میں   ہے

آؤ عِصیاں   شِعارو نہالو یہاں                رحمتوں   کا سمندر مدینے میں   ہے

حشر میں   جامِ کوثر کی ہے گر طلب        آؤ ساقیِ کوثر مدینے میں   ہے

آؤ آؤ گنہگارو! آجاؤ تم                      شافعِ روزِ محشر مدینے میں   ہے

اے شَفاعت کے اُمّیدوارو! چلو!       شافعِ روزِ محشر مدینے میں   ہے

تم شَفاعت میں   شک مت کرو زائرو!         شافعِ روزِ محشر مدینے میں   ہے

’’چل مدینہ‘‘ وُہی ہو سکے جسکا دل       گھر میں   رہ کر بھی اکثر مدینے میں   ہے

’’چل مدینہ‘‘ کا دیوانو! مُژدہ سنو        جلد ہر بامقدَّر مدینے میں   ہے

سبز گنبد کا عطارؔ منظر تو دیکھ

کس قدر کیف آور مدینے میں   ہے

 

 



Total Pages: 406

Go To