Book Name:Wasail e Bakhshish

مجرِموں   کو شہا! بخشواتا ہے تُو              اپنی اُمّت کی بگڑی بناتا ہے تُو

 

غم کے ماروں   کو سینے لگاتا ہے تُو              غمزدوں   بے کَسوں   کا تُو غمخوار ہے

سَروَرِ انبیاء رحمتِ دوسَرا                     تُوہی مُشکِل کُشا تُو ہی حاجت روا

جب بھی سَر پر مِرے کوئی ٹُوٹی بَلا           اِذنِ رب سے تُو میرا مددگار ہے

زیرِ جِسمِ مُبارَک کبھی بوریا([1])                ہاتھ تَکْیہ ہے بستر کبھی خاک کا

جان و دِل سادَگی پر ہوں   اُس کی فِدا         جو کہ سارے رسولوں   کا سردار ہے

دو تڑپنے کا آقا قرینہ مجھے                     دے دو خسْتَہ جِگر چاک سینہ مجھے

چشمِ تر دے دو شاہِ مدینہ مجھے                تیرے غم کا یہ بندہ طلب گار ہے

ٹھوکریں   دَر بَدر کب تک اب کھاؤں   میں       پھر مدینے مُقدَّر سے جب آؤں   میں

کاش! قدموں   میں   سرکار مرجاؤں   میں       یانبی! یہ تمنائے بدکار ہے

سُنّتیں   مصطَفٰے کی تُو اپنائے جا                دِین کو خوب محنت سے پَھیلائے جا

یہ وَصیَّت تُو عطارؔ پہنچائے جا

اُس کو جو اُن کے غم کا طلبگار ہے

 

عید میلادُ النَّبی ہے دل بڑا مسرور ہے

عیدِمیلادُالنَّبی ہے دل بڑا مسرور ہے

ہر طرف ہے شادمانی رنج و غم کافور ہے

اِس طرف جو نور ہے تو اُس طرف بھی نور ہے

ذرَّہ ذرَّہ سب جہاں   کا نُور سے معمور ہے

 ہر مَلَک ہے شادماں   خوش آ ج ہر اک حور ہے

ہاں  ! مگر شیطان مَع رُفَقا بڑا رنجور ہے

آمدِسرکار سے ظلمت ہوئی کافور ہے

کیا زمیں   کیا آسماں   ہر سمت چھایا نور ہے

 



[1]     چٹائی   ۔



Total Pages: 406

Go To