Book Name:Wasail e Bakhshish

یارسولَ اللّٰہ! آکر قبر روشن کیجئے

ذات بے شک آپ کی تو مَنبعِ انوار ہے

قبر میں   شاہِ مدینہ آچکے مُنکر نکیر

ہو کرم! للہ بندہ بیکس و ناچار ہے

یانبی! جنّت کی کھڑکی قبر میں   کُھلوایئے

پھر تو فضلِ رب سے اپنی قبر بھی گلزار ہے

تُو نے دنیا میں   بھی عَیبوں   کو چُھپایا یاخدا

حشر میں   بھی لاج رکھ لینا کہ تُو ستّار ہے

نیکیاں   پلّے نہیں   آقا شَفاعت کیجئے

آپ کی نظرِ کرم ہوگی تو بَیڑا پار ہے

یانبی! عطارؔ کو جنّت میں   دے اپنا جَوار

واسِطہ صِدّیق کا جو تیرا یارِ غار ہے

کاش! ہو ایسی مدینے میں   کبھی تو حاضِری

یہ خبر آئے وطن میں   مرگیا عطارؔ ہے

 

مجھ کو درپیش ہے پھر مُبارَک سفر قافِلہ اب مدینے کا تیّار ہے

مجھ کو درپیش ہے پھر مُبارَک سفر          قافِلہ اب مدینے کا تیّار ہے

نیکیوں   کا نہیں   کوئی تَوشہ فَقَط                میری جھولی میں   اَشکوں   کا اِک ہار ہے

کچھ نہ سَجدوں   کی سوغات ہے اور نہ کچھ      زُہد و تقویٰ مِرے پاس سرکار ہے

چل پڑا ہوں   مدینے کی جانِب مگر          ہائے سر پر گناہوں   کا انبار ہے

جُرم و عِصیاں   پہ اپنے لَجاتا ہوا               اور اَشکِ نَدامت بہاتا ہوا

تیری رَحمت پہ نظریں   جماتا ہوا            در پہ حاضِر یہ تیرا گنہگار ہے

تیرا ثانی کہاں  ! شاہِ کون ومکاں             مجھ سا عاصی بھی اُمّت میں   ہوگا کہاں  !

تیرے عَفْو و کرم کا شہِ دو جہاں  !          کیا کوئی مجھ سے بڑھ کر بھی حقدار ہے؟

یانبی! تُجھ پہ لاکھوں   دُرُود و سلام           اس پہ ہے ناز مجھ کو ہوں   تیرا غلام

اپنی رحمت سے تُو شاہِ خیرُالانام            مجھ سے عاصی کا بھی ناز بَردار ہے

 



Total Pages: 406

Go To