Book Name:Wasail e Bakhshish

لاج رکھنا حشر میں   بدکار  کی                         تیرا بندہ([1])ہے گو بداطوار ہے

 

جانکنی کا وقت ہے یامصطَفٰے                        جاں   بلب اب طالبِ دیدار ہے

آپ کے قدموں   میں   گر کر موت کی             آرزو یاسیِّدِ ابرار ہے

مغفِرت فرما  طفیلِ مُرشِدی                       یہ دعا تجھ سے مرے غفّار ہے

بُلبلو! تم کو مبارَک پھول ہو                      بس گیا طیبہ کا دل میں   خار ہے

کیا کروں   میں   دیکھ کر رنگِ چمن                  دشتِ طیبہ سے مجھے تو پیار ہے

سبز گنبد کی ضِیائیں   مرحبا                          مرحبا پُرنور ہر مینار ہے

جگمگاتا ہے مدینہ رات دن                        سبز گنبد مَنبعِ انوار ہے

جس کی تُربت ہے بقیعِ پاک میں                    اُس کو حاصل قُربتِ سرکار ہے

مصطَفٰے اِس روز آئے اس لئے                    عیدِ میلادُ النبی سے پیار ہے

مرحبا! آقا کی آمد مرحبا!                        ہم کو اس نعرے سے بے حد پیار ہے

جو کوئی گستاخ ہے سرکار کا                        وہ  ہمیشہ  کے  لئے  فِی النّار ہے

دشمنوں   کا تنگ گھیرا ہو گیا                        رَحم کی درخواست اب سرکار ہے

آہ! دشمن خون کا پیاسا ہوا                        یانبی! تیری مدد درکار ہے

حاسدوں   کو دے ہدایت یاخدا                    اُس کا صدقہ جو مِرا غمخوار ہے

غوث کے دامن میں   عطّارؔ آگیا

دو جہاں   میں   اس کا بیڑا پار ہے

 

آہ! ہر لمحہ گُنَہ کی کثرت اور بھرمار ہے

آہ! ہر لمحہ گنَہ کی کثرت اور بھرمار ہے

غَلبۂ شیطان ہے اور نفسِ بداطوار ہے

مجرموں   کے واسطے دوزخ بھی شُعلہ بار ہے

ہر گنہ قَصداً کیا ہے اسکا بھی اقرار ہے

 



[1]     شاید کسی کووسوسہ آئے کہ اِس شعر میں   اپنے آپ کو ’’ نبی کا بندہ‘‘ظاہر کیا گیا ہے، حالانکہ ہر شخص صرف اللّٰہ ہی کا بندہ ہے۔ اِس وسوسے کا علاج حاضرِ خدمت ہے۔ چُنانچِہ ’’فیروز اللغات ‘‘ میں   ’’بندہ‘‘ کے12معنیٰ لکھے ہیں   جن میں   غلام ، ملازم، خاکسار، حکم ماننے والا اور آدمی وغیرہ شامل ہیں   ۔ عام بول چال میں   ہمارے یہاں   لفظ ’’ بندہ‘‘ آدمی کے معنیٰ میں   بکثرت استعمال ہوتا ہے جیسے کہ پوچھتے ہیں   : ہاں   بھئی ! آپ کے کتنے ’’بندے‘‘ ہیں  ؟ جی جناب! ہمارے بندے پورے ہو گئے، اس کو آنے دو یہ ہمارا بندہ ہے، دکاندار نے اپنا’’ بندہ‘‘ بھیج دیا تھا، فُلاں   کے دو بندے آئے تھے اور بتا رہے تھے وغیرہ وغیرہ ۔ جب عام آدمی بھی ایک دوسرے کو’’ اپنا بندہ‘‘ کہہ سکتے ہیں   تو اگرکوئی اپنے آپ کو انبیا ء کرام علیہم الصلوٰۃ والسلام یااولیائے کرام رحمہم اللّٰہ السلام کا ’’بندہ‘‘ کہے تو بھلا اس میں   کیا مُضایَقہ ہو سکتا ہے!میرے آقا اعلیٰ حضرت،اِمامِ اَہلِ سنّت، مولیٰنا شاہ امام اَحمد رضا خانعلیہ رَحمۃُ الرَّحمٰن ’’ فتاوٰی رضویہ‘‘ جلد 24 صَفْحَہ 705 پر نقل کرتے ہیں  : امیرُ الْمُؤمِنِینحضرتِ سیِّدُنا فاروقِ اعظم رضی اللّٰہ تعالٰی عنہنے برسرِمِنبر خطبے میں   فرمایا: میں   رسولِ اکرم صلَّی اللّٰہ تعالٰی علیہ واٰلہٖ وسلَّم کے ساتھ تھا، کُنْتُ عَبْدَہٗ وَخَادِمَہٗ اور میں   آپصلَّی اللّٰہ تعالٰی علیہ واٰلہٖ وسلَّم کاعبد یعنی بندہ اورخادِم تھا۔ ( تاریخ دمشق ج۴۴ص۲۶۴)



Total Pages: 406

Go To