Book Name:Wasail e Bakhshish

تُو ہَمدَم ہے پھر کیا غم ہے، گو سارا جہاں   ٹھکراتا رہے

 

صد شکر خدایا تُو نے دیا، ہے رَحمت والا وہ آقا

جو اُمّت کے رنج و غم میں  ، راتوں   کو اَشک بہاتا رہے

جب گرمیِ حشر ہو زَوروں   پر، اُس وقت تمنّا ہے سروَر!

ہم پیاس کے ماروں   کو کوثر، کے جام پہ جام پلاتا رہے

ہے میر ی تمنّاربِّ جہاں   ، ہر خُرد وکلاں ([1])ہر ایک جواں 

ہر ’’دعوتِ اسلامی‘‘ والا، سنّت کا عَلم لہراتا رہے

ہے تجھ سے دعا ربِّ اکبر! مقبول ہو ’’فیضانِ سنّت‘‘

مسجِد مسجِد گھر گھر پڑھ کر، اسلامی بھائی سناتا رہے

جب میرا یاور ہے سروَر، پھر ڈر محشر کا ہو کیو نکر!

وہ حَشْر میں   رُسوا کیسے کرے جو عیب یہاں   پہ چُھپاتا رہے

جب تن سے جدا ہو جاں  مُضطَر اُس وقت ہو جلوہ پیشِ نظر

ہو قبر میں   بھی سایہ گُستَر([2])، تُو میٹھی نیندسلاتا رہے

یارب! یہ دعا عطاّرؔ کی ہے جس وقت تلک دنیا میں   جئے

محبوب کی سنّت عام کرے ، یہ ڈنکا دیں   کا بجاتا رہے

 

                  مانگ لو جو کچھ تمہیں   درکار ہے                                                 

(یہ کلام۱۷۔۱۲۔۱۴۲۲ھ کو مدینۃُ المنورہ میں   تحریر کرنے کی سعادت حاصل ہوئی )

مانگ لو جو کچھ تمہیں   درکار ہے                     میرے آقا کا سخی دربار ہے

حاضِرِ دربار ہوں   میرے طبیب                     دردِ عِصیاں   کی دوا درکار ہے

کثرتِ خَندہ([3])سے دل مُردہ ہوا                     تجھ سے فریاد اے شہِہ اَبرار ہے

قہقہہ تم مت لگاؤ بھائیو!                             گر لحاظِ گِریۂ سرکار ہے

ذکرِ حق میں   لب کو بس مشغول رکھ                 راحتِ دل گر تجھے درکار ہے

دیجئے ’’قُفلِ مدینہ‘‘ یہ غلام                         آہ! بداَطوار و بدگُفتار ہے

عُمر گھٹتی جا رہی ہے آہ! نفس!                      گرم عصیاں   کا مگر بازار ہے

دیس کا گورِ غریباں  ([4]) آہ! آہ!                      موت طیبہ کی مجھے درکار ہے

 



[1]     بچّہ اور بوڑھا    ۔

[2]     سایہ کرنے والا ۔

[3]     ہنسی   ۔

[4]     قبرستان  ۔



Total Pages: 406

Go To