Book Name:Wasail e Bakhshish

بھر کے جاتے ہیں   منگتے جہاں   جھولیاں                      بھول جاتے ہیں   غم، غم کے مارے جہاں

جس جگہ دشمنوں   نے بھی پائی اَماں                          میرے میٹھے نبی کا وہ دربار ہے

وہ حبیبِ خدا سرورِ اِنس و جاں                              جس کے زیرِ تصرُّف ہیں   دونوں   جہاں

اُس پہ قربان دل اُس پہ قربان جاں                          جو خدا کی خدائی کا مختار ہے

اے مقدَّر کی روٹھی ہواؤ سُنو!                            حالِ دِل پر نہ یُوں   مُسکراؤ سُنو!

آندھیو! گردِشو! تم بھی آؤ سُنو!                           مصطَفٰے میرا حامی و غمخوار ہے

ٹوٹے گو سر پہ کوہِ بَلا صَبر کر                                اے مُبلِّغ نہ تُو ڈگمگا صَبْر کر

لب پہ حَرفِ شِکایت نہ لا صَبر کر                           ہاں   یِہی سُنّتِ شاہِ ابرار ہے

یاحبیبِ خدا مجھ پہ چشمِ عطا                                کر دو تم از پئے غوث و احمدرضا

لے کر اُمّیدِ عَفو و کرم سرورا                              در پہ حاضِر تُمہارا گنہگار ہے

خواہ دولت نہ دے کوئی ثَروَت([1])نہ دے                  چاہے عزّت نہ دے کوئی شُہرت نہ دے

تختِ شاہی نہ دے اور حکومت نہ دے

تُجھ سے عطارؔ تیرا طلب گار ہے

 

اے کاش! شبِ تنہائی میں  ، فُرقت کا اَلَم تڑپاتا رہے

اے کاش! شبِ تنہائی میں  ، فُرقت کا اَلَم تڑپاتا رہے

 لمحہ لمحہ الفت کی آگ کو اور بھی تُو بھڑکاتا رہے

بے تاب جگر، قلبِ مُضطَر، دے دیجئے سرور! چشمِ تر

ہر وقت بھروں   ٹھنڈی آہیں  ، غم تیرا خون رُلاتا رہے

بے چَین رہوں  بے تاب رہوں  ، میں   ہچکیاں   باندھ کے روتارہوں 

یہ ذوقِ جُنوں   بڑھتا ہی رہے، ہر دم یہ مجھ کو رُلاتا رہے

میں   عشق میں   یوں   گم ہو جا ؤں  ، ہر گز نہ پتا اپنا پاؤں 

جب جب میں   تڑپ کر گر جاؤں  ، تِرا دستِ عنایت اُٹھاتا رہے

جب آؤں   مدینے روتا ہوا، ہو سامنے جب رَوضہ تیرا

چہرے سے نقاب اُٹھ جائے اور تُو جامِ دید پلاتا رہے

بے کس ہوں   شہا! میں   دُکھیارا، لوگوں   نے مجھے ہے دُھتکارا

 



[1]     تَوَنگری ،دولتمندی ۔



Total Pages: 406

Go To