Book Name:Wasail e Bakhshish

اِس کی آنکھیں   پاک کر کے جلوۂ زَیبا دکھا         ایک مدّت سے یہ تیرا طالبِ دیدار ہے

گنبدِ خَضرا پہ آقا جاں   مِری قربان ہو               میری دیرینہ یہی حسرت شہِ اَبرار ہے

مسکراتے آؤ آقا آکے کلمہ بھی پڑھاؤ              ہو کرم شاہِ مدینہ! جاں   بلب بیمار ہے

آفتوں   نے گھیر رکھا ہے شہا ہر سمت سے          مُلتجی چشمِ کرم کا بیکس و ناچار ہے

جو ترے در پر جھکا وہ سر بُلندی پاگیا                 جو اکڑ کررہ گیا بے شک ذلیل وخوار ہے

دشمنوں   کے ظلم حد سے بھی تجاوُز کر گئے         آپ سے فریاد مولیٰ حیدرِ کرّار ہے

قلبِ مُضطَر چشمِ تر سوزِ جگر سینہ تَپاں                  طالبِ آہ و فُغاں   جانِ جہاں   عطارؔ ہے

سب گنہگار اِک طرف عطارؔ اکیلا اک طرف

مجرموں   میں   منتخب مجرِم یِہی عطارؔ ہے

 

جو بھی سرکار  کا عاشقِ زار ہے اُس کی ٹھوکر پہ دولت کا انبار ہے

جو بھی سرکار کا عاشقِ زار ہے                           اُس کی ٹھوکر پہ دولت کا انبار ہے

سلطنت سے اُسے کیا سَرَوکار ہے                      واسِطے اِقتِدار اُس کے بیکار ہے

جو کہ دیوانۂ شاہِ اَبرار ہے                               جس کا دِل اُن کی اُلفت سے سَر شار ہے

ان کی سنَّت کا جو آئنہ دار ہے                          بس وُہی تَو جہاں   میں   سمجھدار ہے

آتَشِ شوق میں   کاش! جلتا رہوں                        اور خیالِ مدینہ میں   کھویا رہوں

بس ’’مدینہ مدینہ‘‘ ہی کرتا رہوں                       یہ دُعا میری اے ربِّ غفّار ہے

دُور دنیا کے ہوجائیں   رنج و اَلَم                          مجھ کو مل جائے میٹھے مدینے کا غم

ہو کرم ہو کرم یاخُدا ہو کرم!                           واسِطہ اُس کا جو شاہِ اَبرار ہے

آہ! عِصیاں   کے طوفاں   میں   جانِ چمن                 پھنس گیا ہے سفینہ اے شاہِ زَمن

بس تمہِیں   ایک اُمّید کی ہو کِرَن                       تم جو چاہو تو بیڑا مِرا پار ہے

رو رہا ہے یہ جو ہِچکیاں   باندھ کر                         یاد آیا ہے اِس کو نبی کا نگر

کیا کرو گے طبیبو! اِسے دیکھ کر                         چھوڑ دو یہ مدینے کا بیمار ہے

میٹھے میٹھے مدینے کی مہکی فَضا                           ہر مسلمان کو یاالٰہی! دِکھا

اُس شہِ کربلا کا تجھے واسِطہ                               جو جَوانانِ جنّت کا سردار ہے

آہ! رنج و اَلَم کی نہیں   کوئی حَد                            کام کرتی نہیں   اب تو عقل و خِرَد

 

المدد اے مِرے رہنما المَدد                              پاؤں   زخمی ہیں   اور راہ پُر خار ہے

مجھ کو سَوزِ بِلال اور سَوزِ رضا                                دے دو سوزِ اُویس اور سوزِ ضِیا

واسِطہ تُجھ کو آقا اُسی غوث کا                               اولیا کا جو سلطان و سردار ہے

 



Total Pages: 406

Go To