Book Name:Wasail e Bakhshish

ہے شاد شاد مسلماں   مگر عَدو ناخوش           ہے ٹوٹی اس پہ قیامت نبی کی آمد ہے

جُلوسِ جشنِ ولادت میں   نعت کی دھومیں      مچاؤ ہے یہ سعادت نبی کی آمد ہے

خوشی سے آج تو لَوٹوں   گا خوب مچلوں   گا      جہاں   میں   ماہِ رسالت نبی کی آمد ہے

گھر آمِنہ کے چلو چل کے عرض کرتے ہیں    ہمیں   ہو بھیک عِنایت نبی کی آمد ہے

 

اے غمزدو! ہو مبارک کہ غم غَلَط ہو نگے            ملے گی اب تمہیں   راحت نبی کی آمد ہے

خوشی سے پھولے سماتے نہیں   ہیں   عُشّاق آج      ہے چھائی رُخ پہ بَشاشَت نبی کی آمد ہے

کرو گناہوں   سے توبہ تو خوش خُدا ہوگا              بہاؤ اشکِ نَدامت نبی کی آمد ہے

الٰہی! جشنِ ولادت کا واسِطہ ہم کو                     عذاب سے دے بَرائَ ت نبی کی آمد ہے

بڑھا کے کاسۂ دل آج مانگ لومنگتو                  تم ان سے ان کی مَحَبَّتنبی کی آمد ہے

نہ مانگنے میں   کسر سائلو کوئی رکھنا                      جو چاہو مانگ لو نِعمت نبی کی آمد ہے

سبھی نبی صَفیں  باندھے کھڑے ہیں  اَقصیٰ میں     ہوئی برائے اِمامت نبی کی آمد ہے

اندھیری گور میں   گھبراؤ مت گنہگارو               لو کر لو تم بھی زِیارت نبی کی آمد ہے

جو خوش نصیب ہیں   وہ اپنے رب کی رحمت سے   پِئیں   گے دِید کا شربت نبی کی آمد ہے

گناہ گارو لِپَٹ جاؤ آج قدموں   سے                 کرم سے پاؤ گے جنّت نبی کی آمد ہے

اندھیرا گُھپ تھا چَکا چَوند ہو گئی یک دم              بِفَضلہٖ مِری تُربَت نبی کی آمد ہے

کرم کی بارِشیں   ہوں   گی اے مجرِمو تم پر           ذرا بھی آج ڈرو مت نبی کی آمد ہے

فِرِشتگانِ عذاب اب تو چھوڑ دو مجھ کو               ہوئی برائے شَفاعت نبی کی آمد ہے

لِپٹ کے دامنِ رحمت سے قبر میں   عطارؔ

نکالو آج تو حسرت نبی کی آمد ہے

 

یارسولَ اللّٰہ !مجرم حاضِرِ دربار ہے

یارسولَ اللّٰہ! مجرم حاضِرِ دربار ہے                 نیکیاں   پلّے نہیں   سر پر گُنہ کا بار ہے

نامۂ اعمال میں   کوئی نہیں   حُسنِ عمل                 پاس دولت نیکیوں   کی کچھ نہیں   نادار ہے

تم شہِ ابرار یہ سب سے بڑا عِصیاں   شِعار           یوں   شَفاعت کا یِہی سب سے بڑا حقدار ہے

کردو مالا مال آقا دولتِ اَخلاق سے                  خُلق کی دولت سے یہ محروم و بدگُفتار ہے

 



Total Pages: 406

Go To