Book Name:Wasail e Bakhshish

 

 

ہے آج جشنِ ولادت نبی کی آمد ہے

    (۱۴ صفرالمُظفَّر ۱۴۲۸ھ کو یہ کلام قلمبند کیا گیا)

ہے آج جشنِ وِلادت نبی کی آمد ہے              جلاؤ شمعِ مَحَبَّت نبی کی آمد ہے

جہاں   میں   بجتی ہے نَوبت نبی کی آمد ہے          سُناؤ سب کو بِشارت نبی کی آمد ہے

ہوئی خدا کی عِنایت نبی کی آمد ہے                 سجائے تاجِ شَفاعت نبی کی آمد ہے

گُلوں   پہ چھاگئی نُزہت نبی کی آمد ہے              چمن میں   پھیلی ہے نکہَت نبی کی آمد ہے

ہے اک عجیب سی فَرحت نبی کی آمد ہے          دلوں   پہ طاری مَسرَّت نبی کی آمد ہے

نہ کیوں   ہو وَجد میں   قِسمت نبی کی آمد ہے         نہیں   خوشی کی نِہایَت نبی کی آمد ہے

الٰہی! کرلوں   زیارت نبی کی آمد ہے               عطا ہو چشمِ بَصیرت نبی کی آمد ہے

ہے خوب بارشِ رحمت نبی کی آمد ہے             نہالو پاؤ گے بَرکت نبی کی آمد ہے

ہُوا ہے وا  درِ رحمت نبی کی آمد ہے                  خدا سے مانگ لو جنّت نبی کی آمد ہے

برائے رُشد و ہِدایت نبی کی آمد ہے               سُنانے نیکی کی دعوت نبی کی آمد ہے

عَدو پہ چھائی ہے ہَیبت نبی کی آمد ہے              ملی ہے خاک میں   نَخْوَتنبی کی آمد ہے

بُتوں  کی آگئی شامت نبی کی آمد ہے               مٹے گی کُفر کی ظُلمت نبی کی آمد ہے

 

خوشی کی آ گئی ساعت نبی کی آمد ہے          مناؤ جشنِ ولادت نبی کی آمد ہے

سجاؤ گھر کو چَراغاں   کرو مَحلّے میں                   مناؤ جشنِ ولادت نبی کی آمد ہے

مچاؤ دھوم سبھی مرحبا کے نعروں   کی           مناؤ جشنِ ولادت نبی کی آمد ہے

سجا دو کوچہ و بازار سبز جھنڈوں   سے            مناؤ جشنِ ولادت نبی کی آمد ہے

پکارو  زور سے  دیوانو!  یارسولَ اللّٰہ            ملے گی قلب کو راحت نبی کی آمد ہے

اُٹھو ادب سے صلوٰۃ و سلام پڑھتے ہیں          اب آیا وقتِ ولادت نبی کی آمد ہے

پڑھو سلام کرو ڈُوب کر مَحَبَّت میں            دُرُودِ پاک کی کثرت نبی کی آمد ہے

کرم کے در ہیں  کُھلے جھوم کر برستی ہے      خُدائے پاک کی رَحمت نبی کی آمد ہے

کرو خدا سے دعائیں   نہ ہو گی مایوسی            کُھلا ہے بابِ اِجابت نبی کی آمد ہے

 



Total Pages: 406

Go To