Book Name:Wasail e Bakhshish

حق نے کردیا مالک تم کو سب خزانوں   کا

تم نے ہی کِھلایا ہے تم نے ہی پِلایا ہے

کیوں   فِدا نہ ہو عطارؔ آپ پر شہِ ابرار

اِس کو اپنے دامن میں   آپ نے چھپایا ہے

آپ کے کرم سے یہ دھوم ہے قیامت میں 

دیکھو دیکھو عطّارؔ اب کتنا خوش خوش آیا ہے

 

اے خاکِ مدینہ ترا کہنا کیا ہے

اے خاکِ مدینہ ! تِرا کہنا کیا ہے                  تُجھے قُربِ شاہِ مدینہ مِلا ہے

شَرَف مصطَفٰے کے قَدم چُومنے کا                 تجھے بارہا خاکِ طیبہ مِلا ہے

مُعَطَّر ہے کتنی تُو خاکِ مدینہ                      کہ خوشبوؤں   سے ذرّہ ذرّہ بسا ہے

لگاؤ تم آنکھوں   میں   خاکِ مدینہ                  کوئی اِس سے بہتر بھی سُرمہ بَھلا ہے !

مریضو! اُٹھا کر کے خاکِ مدینہ                    کو لے جاؤ! اِس میں   یقینا شِفا([1])ہے

مدینے کی مِٹّی ذرا سی اُٹھاکر                       پیو گھول کر ہر مَرَض کی دَوا ہے

عقیدت سے خاکِ مدینہ بدن پر                  مَلو تُم ہر اِک دَرد کی یہ دَوا ہے

تُجھے واسِطہ خاکِ طیبہ کا یاربّ!                  عَطا کر غمِ مُصطَفٰے اِلتِجا ہے

ہمیں   موت خاکِ مدینہ پر آئے                  اِلٰہی! یہ تجھ سے ہماری دُعا ہے

مِری نَعش پر آپ خاکِ مدینہ                   چھڑکنا مِرے ساتھیو! اِلتِجا ہے

پسِ مَرگ مولیٰ  تُو مٹّی ہماری                    ملا خاکِ طیبہ میں   یہ اِلْتِجا ہے

بدن پر ہے عطّارؔ کے خاکِ طیبہ

                                          پَرے ہٹ جہنَّم تِرا کام کیا ہے  

 

ذرّے ذرّے پہ چھایا ہوا نُور ہے،

میرے میٹھے مدینے کی کیا بات ہے

ذرّے ذرّے پہ چھایا ہوا نُور ہے، میرے میٹھے مدینے کی کیا بات ہے

نُور سے سب فَضا اِس کی معمُور ہے، میرے میٹھے مدینے کی کیا بات ہے

 



[1]     فرمانِ مُصطَفٰیصلَّی اللہ تعالیٰ علیہ وآلہ وسلَّم ہے: غُبَارُ الْمَدِیْنَۃِ شِفَاء ٌ مِّنَ ا لْجُذَامِ ۔یعنی مدینۂ مُنوَّرہ کی خاکِ پاک جُذام کے لیے مُوجِبِ شِفا ہے۔(اَ لْجامِعُ الصَّغِیر ص۳۵۵حدیث ۵۷۵۳)حضرتِ علّامہ قسطلانی قدس سرہ النورانی فرماتے ہیں  :مدینۂ مُنوَّرہ زادَھَااللّٰہُ شَرَفًاوَّ تَعظِیْماً کی ایک خصوصیّت یہ بھی ہے کہ اس کی مبارک خاک کوڑھ اور سفید داغ کی بیماریوں   بلکہ ہر بیماری سے شِفا ہے۔(اَلْمَواہِبُ اللَّدُنِّیَّۃ لِلْقَسْطَلانِی ج۳ص۴۳۱)                                                                      



Total Pages: 406

Go To