Book Name:Wasail e Bakhshish

گو آفات و اَمراض ڈیرا جمائیں          کئے جانا صَبْر اَجْر اِس میں   بڑا ہے

طواف و سعی گرچِہ تم کو تھکا دیں        کئے جانا صَبْر اَجْر اِس میں   بڑا ہے

مِنیٰ اور عَرفات میں   بھیڑ ہو گی         کئے جانا صَبْر اَجْر اِس میں   بڑا ہے

دعاؤں   میں   عطاّرؔ کو یاد رکھنا

سلام اُن سے کہنا یِہی اِلتجا ہے

 

افسوس وقتِ رخصت نزدیک آرہا ہے

افسوس وقتِ رخصت نزدیک آرہا ہے

اِک ہُوک اٹھ رہی ہے دل بیٹھا جارہا ہے

دل میں   خوشی تھی کیسی جب میں  چلا تھا گھر سے

دل غم کے گہرے دریا میں   ڈوبا جارہا ہے

ہے فرقتِ مدینہ سے چاک چاک سینہ

ابرِسیاہ غم کا اب دل پہ چھا رہا ہے

آنکھ اشکبار ہے اب دل بے قرار ہے اب

دل کو جدائی کا غم اب خوں   رُلا رہا ہے

کیوں   سبز سبز گنبد پر ہو گیا نہ قرباں   

اے زائرِ مدینہ! تُو بھول کھا رہا ہے

افسوس! چند گھڑیاں   طیبہ کی رہ گئی ہیں   

دل میں   جدائی کا غم طوفاں   مچا رہا ہے

 

کچھ بھی نہ کرسکا ہوں   ہائے ادب یہاں   کا

یہ غم مرے کلیجے کو کاٹ کھا رہا ہے

اب روح بھی ہے مغموم اور جان بھی ہے حیراں   

بادَل غم و اَلَم کا ہر سَمت چھا رہا ہے

موت آپ کی گلی کی بہتر ہے زندگی سے

 



Total Pages: 406

Go To