Book Name:Wasail e Bakhshish

نہ قدموں   سے عطاّرؔ کو دُور کرنا

یہ تیرا گدا ہے بھلا یا  بُرا ہے

 

تمہارے مقدَّر پہ رشک آ رہا ہے

(نواسیوں   اور ان کے ماں   باپ کے عزمِ مدینہ کے پُرکیف موقع پر منظوم دعائیں   اورنیکی کی دعوت)  

(۵ شوال المکرم۱۴۳۴ھ 12.09.13)

تمہارے مقدَّر پہ رشک آ رہا ہے     مدینے کا تم کو بُلاوا ملا ہے

خدا اور نبی کا کرم ہو گیا ہے           سفر سوئے طیبہ مِری آل کا ہے

سبھی بچّیوں   کے بَہمراہ ماں   باپ     چلا حج کو ننّھا سا یہ قافلہ ہے

خدائے محمد ہو حامی و ناصر             سفر خیریت سے ہو میری دعا ہے

زُبان اور آنکھوں  کا قفلِ مدینہ       لگا لو تمہارا اِسی میں   بھلا ہے

تم اِحرام میں   خوب لبیک پڑھنا      ثواب اس میں   لا ریب حد سے  سوا ہے

حجازِ مقدّس کی گلیوں   میں   ہر گز      نہ تم تُھوکنا یہ مِری التجا ہے

ادب خوب مکّے مدینے کا کرنا         یہی اولیا کا طریقہ رہا ہے

جو ہے باادب وہ بڑا بانصیب اور     جو ہے بے ادب وہ نہایت بُرا ہے

نظر پیارے کعبے پہ پہلی پڑے جب    تو رو رو کے کرنا دعا مشورہ ہے

وہاں    خوب رو رو کے کرنا دُعائیں         کہ در ہر گھڑی رحمتوں   کا کھلا ہے

 

نظر سبز گنبد کو جس وقت چُومے      ادب سے جھکا لینا سر اِلتجا ہے

دُرُود و سلام اورنعتوں   کی دھومیں       مچانا کہ یہ رُوح و دل کی غِذا ہے

عبادت ریاضت تلاوت سے غفلت     نہ کرنا کہ موقَع سُنہری مِلا ہے

مدینے میں   مکّے میں   اِک ایک قراٰں       جو کرتا ہے ختم اُس کی تو بات کیا ہے!

خریداریوں   میں   تم انمول اوقات    نہ ہرگز گنوانا مِرا مشورہ ہے

بَہُت کھانے پینے سے پرہیز کرنا       کہ بِسیار خوری میں   نقصاں   بڑا ہے

پریشانیوں   میں   زُباں   بند رکھنا           کئے جانا صَبْر اَجْر اس میں   بڑا ہے

کوئی جھاڑ دے تب بھی نرمی بَرَتنا     کئے جانا صَبْر اَجر اِس میں   بڑا ہے

 



Total Pages: 406

Go To