Book Name:Wasail e Bakhshish

دیکھو دیوانو! سبز گنبد میں                      کیسا حُسن و جمال رکھا ہے

کیوں   جہنَّم میں   جاؤں   سینے میں               عشقِ اَصحاب و آل رکھا ہے

میں   کبھی کا بھٹک گیا ہوتا                     آپ ہی نے سنبھال رکھا ہے

عاشقِ مال اِس میں   سوچ آخِر               کیا عُروج و کمال رکھا ہے؟

تجھ کو مل جائے گا جو قسمت میں             تیری، رزقِ حلال رکھا ہے

اِس جہاں   کے کمال میں   بے شک          اِک نہ اک دن زوال([1]) رکھا ہے

تجھ سے آقا ترے سُوالی نے                مغفِرت کا سُوال رکھا ہے

سُن لو شیطاں   نے ہر سُو شہوت کا           خوب پھیلا کے جال رکھا ہے

جنَّتی ہے وہ جس نے سنّت کے             خود کو سانچے میں   ڈھال رکھا ہے

 

جو ہے گستاخِ مُصطَفٰے اُس کو         میں   نے دِل سے نِکال رکھا ہے

کس قدر بختور ہے وہ مومن      جس کے پاس اُن کا بال رکھا ہے

مفلسی کا میں   کیوں   کروں   شکوہ     نعمتوں   سے نِہال([2])رکھا ہے

مال کی حِرص مت کرو اِس میں     دو جہاں   کا وبال رکھا ہے

یہ کرم ہی تو ان کا ہے عطارؔ

تجھ نکمّے کو پال رکھا ہے

وسوسہ کے لفظی معنیٰ

’’وسوسہ‘‘کے لغوی معنیٰ ہیں:’’دھیمی آواز‘‘شریعت میں بُرےخیالات اور فاسدفکر(یعنی بُری سوچ)کو وسوسہ کہتے ہیں۔(اشعہ ج۱ص۳۰۰)’’تفسیرِ بغوی‘‘میں ہے:وسوسہ اُس بات کو کہتےہیں جوشیطان انسان کے دل میں ڈالتا ہے۔(تفسیر بغوی ج۴، ۲ص۵۱۸، ۱۲۷)

 

مُبَارَک ہو حبیبِ ربِّ اَ کبر آنیوالا ہے

مُبَارَک ہو حبیبِ ربِّ اَکبر آنے والا ہے

مبارَک! انبیا کا آج اَفسر آنے والا ہے

 



[1]     ترقی جاتی رہنا

 

[2]     مالامال۔خوشحال

 



Total Pages: 406

Go To