Book Name:Wasail e Bakhshish

شہا قافِلے کے سبھی زائروں   نے                            مرے ساتھ عہدِوفا کرلیا ہے([1])

تمہیں   لاج عہدِ وفا کی رکھو گے                            کہ ابلیسِ مردود پیچھے لگا ہے

شفَاعت کی خیرات لینے کو عطارؔ

لئے قافِلہ عنقریب آ رہا ہے

 

قلب میں   عشقِ آل رکھا ہے

قلب میں   عشقِ آل رکھا ہے              خوب اِس کو سنبھال رکھا ہے

ایسا جُود و نَوال([2])رکھا ہے                    سب غلاموں   کو پال رکھا ہے

شکر تیرا کہ ان کی اُمّت میں                 مجھ کو اے ذُوالجلال رکھا ہے

جمع کر کے کبھی نہ سَروَر نے                کوئی مال و مَنَال رکھا ہے

حُبِّ دنیا نے یارسولَ اللّٰہ                  مجھ کو مشِکل میں   ڈال رکھا ہے

جو بھی دیکھے بنے وہ دیوانہ                  اُن میں   ایسا جمال رکھا ہے

جلد لیجے خبر گناہوں   کے                    درد نے کر نِڈھال رکھا ہے

ایسا دو عشق سب کہیں   اِس کے           دل میں   سوزِ بِلال رکھا ہے

نارِ دوزخ جلائے گی کیوں   کر               دل میں   عشق اُن کا ڈال رکھا ہے

ہوں   گنہگار پر غلاموں   میں                   تم نے اب بھی بحال رکھا ہے

میں   نثار آپ نے سدا میرا                  ہر قدم پر خیال رکھا ہے

میں   جہنَّم میں   گر گیا ہوتا                    آپ ہی نے سنبھال رکھا ہے

 

مصطَفٰے نے ہمارے عیبوں   پر                پردہ دامن کا ڈال رکھا ہے

شکریہ تم نے آل کا صدقہ                    میری جھولی میں   ڈال رکھا ہے

’’چل مدینہ‘‘ کی بھیک مل جائے          عاشِقوں   نے سُوال رکھا ہے

دیدو زادِ سفر مدینے کا                         سائلوں   نے سُوال رکھا ہے

 



[1]     ’’چل مدینہ‘‘ کے قافِلے کے بعض اسلامی بھائیوں   کی خواہش پر سب نے راہِ مدینہ میں  سگِ مدینہ عفی عنہ کے ہاتھ پر بیعت کرکے تادمِ زیست دعوتِ اسلامی کی مرکزی مجلس شوریٰ کے ساتھ وفاداری کا عہد کیا۔

[2]     بخشش، مہربانی

 



Total Pages: 406

Go To