Book Name:Wasail e Bakhshish

یا نبی یہ غلام کب حاضِر                        بہرِ عرضِ سلام ہوتا ہے

جو مدینے کے غم میں   روئے وہ               حشر میں   شاد کام ہوتا ہے

جو دُرُود و سلام پڑھتے ہیں                      اُن پہ رب کا سلام  ہوتا ہے

کیا دبے دُشمنوں   سے وہ ، حامی               جس کا خیرُ الانام ہوتا ہے

آزمائِش ہے اُس کی دُنیا میں                    جو یہاں   نیک نام ہوتا ہے

جو ہو اللّٰہ کا ولی اُس کا                           فیض دنیا میں   عام ہوتا ہے

جی لگانے کی جا نہیں   دنیا                       کس کو حاصِل دَوام  ہوتا ہے

دارِفانی میں   خوش رہے کیسے!                جس کامُردوں  میں   نام ہوتا ہے

موت  ایماں   پہ آتی ہے جس پر              فضلِ ربُّ الانام ہوتا ہے

قبر روشن اُسی کی ہو جس پر                    فضلِ ربُّ الانام ہوتا ہے

بے سبب بخشِش اُس کی ہوجس پر               فضلِ ربُّ الاَنام ہوتا ہے

بختور ہے مدینے میں   جس کی                 عُمر کا اختتام ہوتا ہے

جس سے وہ خوش ہوں  حشرمیں   حاصل  اُس کو کوثر کا جام ہوتا ہے

دیکھو عطارؔ کب مِرا طیبہ

جانے والوں   میں   نام ہوتا ہے

 

تمہارا کرم یاحبیبِ خدا ہے

(مکہ مکرمہ سے ۴ محرم الحرام ۱۴۲۲ھ کو مدینۂ منورہ کی حاضِری کیلئے بس میں   سُوار ہونے کے بعد اَلْحَمْدُ لِلّٰہ راہِ مدینہ میں   یہ اشعار تحریر کرنے کی سعادت حاصل ہوئی)

تمہارا کرم یاحبیبِ خدا ہے                                 مدینے کی جانب چلا قافِلہ ہے

میں   راہِ مدینہ کے قُربان جاؤں                              کہ اِس میں   سُرور اور مزہ ہی مزہ ہے

مدینے میں   ’’قفلِ مدینہ‘‘ لگاؤں                            کرم آپ کیجے ارادہ مِرا ہے

عبادت سے خالی ہے اعمالنامہ                             سِوا آنسوؤں   کے مرے پاس کیا ہے

نہ کیوں   تم پہ اِترائے مجرِم تمہارا                           یہاں   تو عَدو بھی اماں   پا رہا ہے

نہیں   جانتا یہ مدینے کے آداب                            یہ تیرا ہے تیرا بھلا یا بُرا ہے

مجھے دیجئے اشکبار آنکھ آقا                                 یہ دل سخت، پتّھر سے بھی ہو گیا ہے

پِلا دے چھلکتا ہوا جامِ الفت                               نظر تیری جانب لگی ساقیا ہے

مدد کیلئے ناخدا آئیے اب                                   سفینہ ہمارا بھَنور میں   پھنسا ہے

 



Total Pages: 406

Go To