Book Name:Wasail e Bakhshish

اپنی الفت کا ساغَر پِلادو ، یاحبیبِ خدا التجاء ہے

حُبِّ دنیائے مُردار دِل میں   ، کرچکی گھر ہے سرکار دِل میں 

تم جو آجاؤ دِلدار دِل میں  ، بس ٹلی دِل سے پھر یہ بلا ہے

یانبی! آپ کے عاشِقوں   کو، آپ کی دیدکے طالِبوں   کو

اپنا جلوہ دکھادیجئے نا، ان بِچاروں   کو ارماں   بڑا ہے

عُمر عطّارؔباون برس کی، ہے ہَوَس تجھ کو دُنیا کی پھر بھی

اب تُو جی جی کے کتنا جئے گا، وقتِ رِحلَت قریب آچکا ہے

 قافِلہ ’’چل مدینہ‘‘ کاآقا، چل پڑا  جانبِ طیبہ مولیٰ

تیرے عُشّاق کے پیچھے پیچھے، تیرا عطارؔ بھی آرہا ہے

 

جو نبی کا غلام ہو تا ہے

(۲۹ ربیع الآخر ۱۴۳۲ھ۔ بمطابق2011-4-4)

جو نبی کا غلام ہوتا  ہے                              قابلِ احترام ہوتا ہے

جو کہ خوفِ خدا سے روتا ہو                      قابلِ احترام ہوتا ہے

جو غمِ مصطَفٰے میں   روتا ہو                          قابلِ احترام ہوتا ہے

جو بُرے خاتمے سے ڈرتا ہو                      قابلِ احترام ہوتا ہے

جودے نیکی کی دعوت اے بھائی               قابلِ احترام ہوتا ہے

جو بھی اپنائے ’’مَدنی اِنعامات‘‘                  قابلِ احترام ہوتا ہے

جو بھی ہے ’’قافِلو ں([1]) ‘‘ کا شَیدائی            قابلِ احترام ہوتا ہے

جو بھی رہتا ہے ’’مَدنی حُلیے‘‘ میں                  قابلِ احترام ہوتا ہے

سنّتیں   اُن کی جو بھی اپنائے                     حشر میں   شاد کام ہوتا ہے

درسِ فیضانِ سنّت اے بھائی                     گھر میں   دینے سے کام ہوتا ہے

بِھیڑ میں   جیسے حجَرِ اَسوَد کا                        دُور سے اِستِلام ہوتا ہے

یوں   ہی عُشّاق کا وطن رہ کر                       ’’دُور سے بھی سلام ہوتا ہے‘‘

ہائے دُوری کو ہو گیا عرصہ                        کب یہ  حاضِر غلام ہوتا ہے

 

کب مدینے میں   حاضِری ہو گی               جانے کب میرا کام ہوتا ہے

 



[1]     یعنی دعوتِ اسلامی کے سنتوں   کی تربیت کے مَدَنی قافِلے۔



Total Pages: 406

Go To