Book Name:Wasail e Bakhshish

غمِ فُرقت دلِ عُشّاق کو بے حد رُلاتا ہے

غمِ فُرقت دِلِ عُشّاق کو بے حد رُلاتا ہے

تڑپ اُٹھتے ہیں   جب اُن کو مدینہ یاد آتا ہے

مجھے اُس کے مُقدَّر پر بڑا ہی رَشک آتا ہے

مدینے کی طرف کوئی مُسافِر جب بھی جاتا ہے

مجھے اُس وَقْت دیوانے پہ بے حد پیار آتا ہے

غمِ ہجرِ مدینہ میں   وہ جب آنسُو بہاتا ہے

یہ بیمارِ مدینہ ہے طبیبو! تم نہ سمجھو گے

تڑپتا ہے اِسے جِس دَم مدینہ یاد آتا ہے

دکھا دو سبز گنبد کی بہاریں   یارسولَ اللّٰہ

نہ جانے کب مدینے کا بُلاوا مجھ کو آتا ہے

مدد سرکار فرماتے ہیں   دیوانہ اگر کوئی

تڑپ کر یارسولَ اللّٰہ کا نعرہ لگاتا ہے

 

عطا کردو عطا کردو بقیعِ پاک میں   مدفَن

مجھے گورِ غریبانِ وطن سے خوف آتا ہے

نہیں   ہے چاند سورج کی مدینے کو کوئی حاجت

وہاں   دن رات اُن کا سبز گنبد جگمگاتا ہے

حُکومت کی طلب دل میں  ، نہ خواہِش تاجِ شاہی کی

نظر میں   عاشِقوں   کے بَس مدینہ ہی سماتا ہے

سخاوت بھی ترے گھر کی عنایت بھی ترے گھر کی

تِرے دَرکا سُوالی جھولیاں   بَھر بَھر کے لاتا ہے

عِبادت ہو تو ایسی ہو ، تِلاوت ہو تو ایسی ہو

سرِ شَبِّیر تو نیزے پہ بھی قُراٰں   سُناتا ہے

 



Total Pages: 406

Go To