Book Name:Wasail e Bakhshish

مرے دِل سے نہ ہرگز یانبی تیری وِلا([1])نِکلے

 

پڑوسی خُلد میں   یارَب بنادے اپنے پیارے کا

یِہی ہے آرزو میری یِہی دِل سے دعا نکلے

تجھے ہرگز گوارا ہو نہیں   سکتا کہ مَحشر میں 

جہنَّم کی طرف روتا ہوا تیرا گدا نکلے

رسولِ پاک سے میرا سلامِ شوق کہہ دینا

قریبِ گنبدِ خَضرا تُو جب بادِ صبا نکلے

تَلاطُم خیز موجیں   ہیں   تھپیڑوں  پر تھپیڑے ہیں 

مِری نیّا بھنور سے اب سلامت ناخُدا نکلے

الٰہی موت آئے گنبدِ خَضرا کے سائے میں 

مدینے میں   جنازہ دھوم سے عطارؔ کا نکلے

 معاف کرو معافی پاؤ

فرمان مصطفٰےصَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم:رحم کیا کرو تم پر رحم کیا جائے گا اور معاف کرنا اختیار کرو اللہ عَزَّوَجَلَّ تمہیں معاف فرمادے گا۔  (مسندامام احمد، ج۲ص ۶۸۲، الحدیث:۷۰۶۲)

 

سِلسلہ آہ! گناہوں   کا بڑھا جاتا ہے

سلسلہ آہ! گناہوں   کا بڑھا جاتا ہے                   نِت نیا جرم ہر اک آن ہوا جاتا ہے

قلب پتھر سے بھی سختی میں   بڑھا جاتا ہے         خَول پر خول سیاہی کا چڑھا جاتا ہے

نفس و شیطان کی ہر آن اطاعت پر دل             آہ! مائل مِرے  اللہ ہوا جاتا ہے

لاؤں   وہ اشک کہاں   سے جو سیاہی دھوئیں           گندگی میں   مرا دل حد سے بڑھا جاتا ہے

عارِضی آفتِ دنیا سے تو ڈرتا ہے دل               ہائے بے خوف عذابوں   سے ہوا جاتا ہے

یہ ترا جسم جو بیمار ہے تشویش نہ کر                  یہ مَرَض تیرے گناہوں   کو مٹا جاتا ہے

اصل برباد کُن اَمراض گناہوں   کے ہیں             بھائی کیوں   اِس کو فراموش کیا جاتا ہے

 



[1]     مَحَبَّت



Total Pages: 406

Go To