Book Name:Wasail e Bakhshish

ملے عِشق کا خزانہ مَدنی مدینے والے

مِری آنیوالی نسلیں   ترے عشق ہی میں   مچلیں 

انہیں   نیک تُو بنانا مَدنی مدینے والے

ملے سنّتوں   کا جذبہ مِرے بھائی چھوڑیں   مولیٰ

سبھی دَاڑھیاں   مُنڈانا مَدنی مدینے والے

مِری کاش! ساری بہنیں  ، رہیں   مدنی برقَعوں   میں 

ہو کرم شہِ زمانہ مَدنی مدینے والے

دو جہان کے خزانے دئیے ہاتھ میں   خدا نے

تِرا کام ہے لُٹانا مَدنی مدینے والے

تِرا غم ہی چاہے عطّارؔ اِسی میں   رہے  گرِفتار

غمِ مال سے بچانا مَدنی مدینے والے

 

ترانے مصطَفٰے کے جھوم کر پڑھتا ہوا نکلے

تَرانے مصطَفٰے کے جھوم کر پڑھتا ہُوا نکلے

یُوں   حج کو’’ چل مدینہ‘‘ کا وطن سے قافِلہ نکلے

نظر جب سبز گنبد پر پڑے غَش کھاکے گِر جاؤں 

تِرے قدموں   میں   جانِ مُضطَرِب یامصطَفٰے نکلے

اگر مِیزاں   پہ پَیشی ہوگئی تو ہائے! بربادی!

گُناہوں   کے سِواکیا میر ے نامے میں   بھلا نکلے

کرم سے اُس گھڑی سرکار !پردہ آپ رکھ لینا

سرِمَحشر مِرے عیبوں   کا جس دم تذکِرہ نکلے

نظر آئیں   جُوں   ہی سرکار مَحشرمیں   مِرے لب سے

یہ نعرہ یارسولَ اللّٰہ کا بے ساختہ نکلے

اگرچِہ دولتِ دنیا مِری سب چھین لی جائے

 



Total Pages: 406

Go To