Book Name:Wasail e Bakhshish

مِری آنکھ میں   سمانا مَدنی مدینے والے

بنے دِل تِرا ٹھکانا مَدنی مدینے والے

تِری جبکہ دید ہوگی جبھی میری عید ہوگی

مِرے خواب میں   تُو آنا مَدنی مدینے والے

مجھے غم ستارہے ہیں   مِری جان کھا رہے ہیں 

تمہیں   حوصَلہ بڑھانا مَدنی مدینے والے

مِرے سب عزیز چُھوٹیں   مِرے دوست بھی گو رُوٹھیں 

شہا تم نہ رُوٹھ جانا مَدنی مدینے والے

میں   اگرچِہ ہوں   کمینہ تِرا ہوں   شہِ مدینہ

مجھے قدموں   سے لگانا مَدنی مدینے والے

تِرے در سے شاہ بہتر ترے آستاں   سے بڑھ کر

ہے بَھلا کوئی ٹِھکانا مَدنی مدینے والے

 

تِرا تُجھ سے ہوں   سُوالی شہا پھیرنا نہ خالی

مجھے اپنا تُو بنانا مَدنی مدینے والے

یہ مریض مَر رہا ہے تِرے ہاتھ میں   شِفا ہے

اے طبیب! جلد آنا مَدنی مدینے والے

تُو ہی انبیا کا سَروَر تُو ہی دو جہاں   کا یَاوَر

تُو ہی رَہبرِ زمانہ مَدنی مدینے والے

تُو ہے بیکسوں   کا یَاوَر اے مِرے غریب پروَر

ہے سخی تِرا گھرانا مَدنی مدینے والے

تُو خدا کے بعد بِہتر ہے سبھی سے میرے سروَر

تِرا ہاشِمی گھرانا مَدنی مدینے والے

تِری فَرش پر حُکومت تِری عَرش پر حُکومت

تو شَہَنشَہِ زمانہ مَدنی مدینے والے

تِراخُلق سب سے بالا تِرا حُسن سب سے اعلیٰ

فِدا تجھ پہ سب زمانہ مَدنی مدینے والے

 



Total Pages: 406

Go To