Book Name:Wasail e Bakhshish

گھر تو گھر سارے، مَحَلّے کو سجاتے جائیں   گے

 

ہم مہِ مِیلاد میں   لہرائیں   گے جھنڈے ہرے

ساری گلیاں   روشنی سے جگمگاتے جائیں   گے

عیدِ میلادُ النَّبی کی شب چَرَاغاں   کر کے ہم

قبر نورِمصطَفٰے سے جگمگاتے جائیں   گے

ہم جُلوسِ جشنِ میلادُ النَّبی میں   جھوم کر

راستے بھر نعت بس سنتے سناتے جائیں   گے

لاکھ شیطاں   ہم کو روکے فضلِ رب سے تا ابد

جشن، آقا کی ولادت کا مناتے جائیں   گے

جھوم کر سارے کہو، آقا کی آمد مرحبا

حشر میں   بھی ہم یِہی نعرہ لگاتے جائیں   گے

یارسولَ اللّٰہ کا نعرہ لگاؤ زور سے

اُن کے دشمن منہ پھُلاتے بُڑبُڑاتے جائیں   گے

 

تم کرو جشنِ ولادت کی خوشی میں   روشنی

وہ تمہاری گورِ تِیرہ جگمگاتے جائیں   گے

دو جہاں   کے شاہ کی شاہی سُواری آگئی

رَحمتوں   کے وہ خزانے اب لٹاتے جائیں   گے

آرہے ہیں   شافِعِ محشر اُٹھو اے عاصِیو!

ہم گنہگاروں   کو حق سے بخشواتے جائیں   گے

ہوگئی صبحِ بہاراں   کیف آورہے سَماں 

خوش نصیبوں   کو وہ اب جلوہ دکھاتے جائیں   گے

 



Total Pages: 406

Go To