Book Name:Wasail e Bakhshish

نَزع میں   قبر میں   محشر میں   وہ پائیں   آرام       دارِ فانی میں   جو بیمارِ مدینہ ہوں   گے

حشر سے کیوں   ہو پریشان گنہگارو تم            اپنے حامی وہاں   سرکارِ مدینہ ہوں   گے

اُن کو حاصل مِرے آقا کی شَفاعت ہوگی    جو کوئی حاضِرِ دربارِ مدینہ ہونگے

میری سرکار کا آئے گا بُلاوا اُن کو              جو کوئی دل سے طلب گارِ مدینہ ہوں   گے

نَزع میں   عاشِقوں   کی عید ہی ہو جائے گی       ان کے سِرہانے توسرکارِ مدینہ ہوں   گے

حشر میں   جائیں   گے عطارؔ  یُوں   اِن شاءَ اللّٰہ

اپنی داڑھی میں   سجے خارِ مدینہ ہوں   گے

 

منانا جشنِ میلادُ النبی ہرگز نہ چھوڑیں   گے

منانا جشنِ میلادُالنبی ہرگز نہ چھوڑیں   گے

جلوسِ پاک میں   جانا کبھی ہرگز نہ چھوڑیں   گے

خدا کے دوستوں   سے دوستی ہرگز نہ چھوڑیں   گے

نبی کے دشمنوں   کی دشمنی ہرگز نہ چھوڑیں   گے

خدائے پا ک کی رسّی کبھی ہرگز نہ چھوڑیں   گے

نہیں   چھوڑیں   گے دامانِ نبی ہرگز نہ چھوڑیں   گے

لگاتے جائیں   گے ہم یارسولَ اللّٰہ کے نعرے

مچانا مرحبا کی دھوم بھی ہرگز نہ چھوڑیں   گے

جو چاہو مانگ لو دروازۂ رحمت کُھلا ہے آج

تمہیں   خالی ولادت کی گھڑی ہرگز نہ چھوڑیں   گے

منائیں   گے خوشی ہم حشرتک جشنِ ولادت کی

سجاوٹ اور کرنا روشنی ہرگز نہ چھوڑیں   گے

اگرچِہ جان بھی اِس راہ میں   قربان ہوجائے

مگر نعتِ نبی پڑھنا کبھی ہرگز نہ چھوڑیں   گے

 

نبی کے نام پر سوجان سے قربان ہوجائیں 

غلامانِ نبی ذِکرِ نبی ہرگز نہ چھوڑیں   گے

 



Total Pages: 406

Go To