Book Name:Wasail e Bakhshish

 

 

 

 

فرمانِ مصطفٰی صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وَسَلَّم:مجھ پر دُرُود پاک کی کثرت کروبے شک یہ تمہارے لئے طہارت ہے ۔ (ابو یعلی ج۵ص۴۵۸حدیث ۶۳۸۳)

 

اے کاش پھر مدینے میں   عطّاؔر جاسکے

اے کاش! پھر مدینے میں   عطارؔ جاسکے             رو رو کے حال شاہ کو اپنا سنا سکے

پچھلے برس تو حاضرِدر ہو گیا تھا آہ!                  اِس سال کاش حج کا شَرَف پھر سے پاسکے

یاربِ مصطَفٰے! کوئی ایسا سبب بنا                        سائے میں   موت گنبدِخَضرا کے آسکے

طیبہ بُلا، یا وہ دلِ غمگین دے مجھے                    دل سے نہ تیرا غم کوئی میرے مٹا سکے

یارب پئے رضا مجھے وہ آنکھ دے کہ جو            عشقِ رسولِ پاک میں   آنسو بہا سکے

وہ آگ میرے سینے میں   آقا لگائیے                 پتّھر سے سخت قلب کو بھی جو جلا سکے

سرکار چار یار کا دیتا ہوں   واسِطہ                        ایسی بہار دو نہ خَزاں   پاس آسکے

دشمن اگرچِہ گھات میں   ہے کوئی غم نہیں            ان کی مدد رہے تو بِگاڑ اپنا کیا سکے

چشمِ کرم ہو ایسی کہ مٹ جائے ہر خطا              کوئی گناہ مجھ سے نہ شیطاں   کرا سکے

ہے صبر تو خزانۂ فِردوس بھائیو!                      عاشق کے لب پہ شکوہ کبھی بھی نہ آسکے

جس وَ قت سُنّتوں   کا میں   کرنے لگوں   بیاں           ایسا اثر ہو پیدا جو دل کو ہِلا سکے

میری زَبان میں   وہ اثر دے خدائے پاک          جو مصطفٰے کے عشق میں   سب کو رُلا سکے

عطارؔ تیرے حامی و ناصِر ہیں   مصطَفٰے

کس کی مجال ہے کہ جو تجھ کو دبا سکے

 

جلد ہم عا زِمِ گلزارِ مدینہ ہوں   گے

جلد ہم عازِمِ گلزارِ مدینہ ہوں   گے            حاضِرِ دَرگہِ سردارِمدینہ ہوں   گے

اب تو نورانی چمن زارِ مدینہ ہو ں   گے          سامنے اب مِرے کہسارِ مدینہ ہوں   گے

سبز گنبد کی وہاں   خوب بہاریں   ہوں   گی        رُوبَرُو پھر مرے اَشجارِ مدینہ ہوں   گے

وَجد آجائے گا قسمت کو بھی اُس دم وَاللہ     سامنے جب مِرے سرکارِ مدینہ ہونگے

اُن کی رحمت سے جو مل جائے بقیعِ غَرقَد      بِالیقیں   قبر میں   انوارِ مدینہ ہوں   گے

قافِلے کی یوں   مدینے سے جُدائی ہوگی        مُضطَر و غمزدہ زَوّارِ مدینہ ہوں   گے

 



Total Pages: 406

Go To