Book Name:Wasail e Bakhshish

نہ لندن کی نہ امریکہ نہ پیرس کی سِیاحت([1])سے

سُکونِ قلب ملتا ہے مدینے کی زیارت سے

خداحافِظ مدینے کے مسافِر جا خداحافِظ

چلیں  گے ُسوئے طیبہ ہم بھی اک دن ان کی رحمت سے

خدا کی تجھ پہ لاکھو ں   رَحمتیں   ہوں   زائرِ طیبہ!

سلامِ شوق کہہ دینا مِرا ماہِ رسالت سے

محمد مصطَفٰے اس کو بھی سینے سے لگاتے ہیں 

جسے سب لوگ ٹُھکراتے ہیں  نفرت سے حَقارت سے

 

تمہارا نَعلِ اَقدس ہی ہمارا تاجِ عزّت ہے

ہمارا واسِطہ کیا تاجِ شاہی سے حُکومت سے

جگر پِیاسا زَباں   سُوکھی خَزاں   چھائی بہار آئے

دلِ پَژ مُردہ([2])کِھل اٹّھے ترے جلووں   کی نُزہت([3])سے

گناہوں   کی میں   چادر تان کر دن رات سوتا ہوں 

جگادو یارسولَ اللّٰہ! مجھے اب خوا بِ غفلت سے

گناہوں   سے مِرا سارا وُجُود افسوس! ہے لِتھڑا

مجھے اب پاک کردیجے گناہوں   کی نُحُوست سے

نَدامت سے گناہوں   کا ازالہ کچھ تو ہو جاتا

مجھے رونا بھی تو آتا نہیں   ہائے نَدامت سے

کرم  اے شافِعِ مَحشر کُھلے اعمال کے دفتر

گو بدکار و کمینہ ہوں   مگر ہوں   تیری اُمّت سے

 

نہ نامے میں   عبادت ہے نہ پلّے کچھ رِیاضت ہے

الٰہی! مغفرت فرما ہماری اپنی رَحمت سے

 



[1]     سَیر۔ سفر

 

[2]     مرجھایا ہوا  

[3]     تروتازگی ۔پاکیزگی

 



Total Pages: 406

Go To