Book Name:Wasail e Bakhshish

فضا صلِّ علیٰ یا مُصطَفٰے سے گونجتی ہوگی

 

وہ جامِ کوثر اپنے ہاتھ سے بھر کر پلائیں   گے

کرم سے دُور محشر میں   ہماری تِشنگی ہوگی

میں   بن جاؤں   سراپا’’ مَدنی اِنعامات ‘‘کی تصویر

بنوں    گا  نیک   یااللّٰہ اگر  رَحمت  تِری   ہوگی

رہوں   ہردم مسافر کاش ’’مَدنی قافلوں  ‘‘ کا میں 

کرم ہوجائے مولا گر!عنایت یہ بڑی ہوگی

زَباں   کا ‘آنکھ کا اور پیٹ کا قفلِ مدینہ تُم

لگا لو ورنہ محشر میں   پشیمانی بڑی ہوگی

مجھے جلوہ دکھا دینا مجھے کلمہ پڑھا دینا

اَجَل جس وقت سر پر یانبی میرے کھڑی ہوگی

 اندھیرا گھپ اندھیرا ہے شَہا وحشت کا ڈیرا ہے

کرم سے قبر میں   تم آؤ گے تو روشنی ہوگی

مِرے مَرقَد میں   جب عطارؔ وہ تشریف لائیں   گے

لَبوں   پر نعتِ شاہِ انبیا اُس دم سَجی ہوگی

 

ہے کبھی دُرُود وسلام تو، کبھی نعت لب پہ سجی رہی

ہے کبھی دُرود و سلام تو، کبھی نعت لب پہ سجی رہی

غمِ ہجر میں   کبھی رو پڑا، کبھی حاضِری کی خوشی رہی

تری آنکھ میں   جو نمی رہی، کلی تیرے دل کی کِھلی رہی

کبھی دل میں   ہُوک اُٹھی رہی، تو نگاہ تیری جھکی رہی

مجھے کردے دِیدۂ تر([1])عطا، غمِ عشق سوزِجگر عطا

ہو بقیعِ پاک میں  جاعطا، یِہی آرزوئے دِلی رہی

 



[1]     رونے والی آنکھ

 



Total Pages: 406

Go To