Book Name:Wasail e Bakhshish

وَہیں   دم جو ٹوٹ جاتا تو کچھ اور بات ہوتی

غمِ روزگارمیں   تو مرے اَشک بہ رہے ہیں   

تِرا غم اگر رُلاتا تو کچھ اور بات ہوتی

نہ فُضول کاش! ہنستا تری یاد میں   تڑپتا

مجھے چَین ہی نہ آتا تو کچھ اور بات ہوتی

یِہی آہ! فکرِ دنیا مِرا دل جَلا رہی ہے

غمِ ہِجر گر ستاتا تو کچھ اور بات ہوتی

یہاں   قبر میں   کرم سے تری دید مجھ کو ہوگی

جو بقیعِ پاک پاتا تو کچھ اور بات ہوتی

 

بَزَبانِ زائِریں   تو میں   سلام بھیجتا ہوں 

کبھی خود سلام لاتا تو کچھ اور بات ہوتی

ارے زائرِ مدینہ !تُو خوشی سے ہنس رہا ہے

دلِ غمزدہ جو لاتا تو کچھ اور بات ہوتی

مِری آنکھ جب بھی کھلتی تِری رَحمتوں   سے آقا

تجھے سامنے ہی پاتا تو کچھ اور بات ہوتی

تُو مدینہ چھوڑ آیا تجھے کیا ہوا تھا عطارؔ

وَہیں   گھر اگر بساتا تو کچھ اور بات ہوتی

بُہتان کی تعریف

کسی شخص کی موجودگی یا غیر موجودگی میں اُس پر جھوٹ باندھنا بہتان کہلاتا ہے۔(الحدیقة الندية، ۲/ ۲۰۰) اس کو آسان لفظوں میں یوں سمجھئے کہ بُرائی نہ ہونے کے باوُجُوداگر پیٹھ پیچھے یا رُوبَرو وہ برائی اس کی طرف منسوب کردی تو یہ بُہتان ہوا مثلاًپیچھے یا منہ کے سامنے ریاکار کہہ دیا اور وہ ریاکار نہ ہو یا اگر ہو بھی تو آپ کے پاس کوئی ثبوت نہ ہو کیوں کہ ریاکاری کا تعلُّق باطنی امراض سے ہے لہٰذا اس طرح کسی کو ریاکار کہنا بہتان ہوا۔

 

ٹھنڈی ٹھنڈی ہوامدینے کی

ٹھنڈی ٹھنڈی ہوا مدینے کی                         مَہکی مَہکی فَضا مدینے کی

آرزُو ہے خُدا مدینے کی                             مجھ کو گلیاں   دِکھا مدینے کی

دِن ہے کیسا مُنوَّر و روشن                            رات رَونق فَزا مدینے کی

 



Total Pages: 406

Go To